Kafi Nahi Khatoot Kisi Baat Ke Liye| Anwar Shoor

Kafi Nahi Khatoot Kisi Baat Ke Liye| Anwar Shoor

Kafi Nahi Khatoot Kisi Baat Ke Liye
Tashreef laiye ga mulaqat ke liye

Duniya mein kia kisi se kisi ko gharaz nahi
Har koi ji raha hai faqt zaat ke liye

Hum bargaa naaz mein iss be niyaz ki
Paida kiye gaye hain shikayat ke liye

Hain patharon ki zad peh tumhari gali mein hum
Kia aaye thay yahan ussi barsaat ke liye

Apni taraf se kuchh bhi unhune ne nahi kaha
Hum ne jawab sirf sawalat ke liye

Roshan karo nah sham se pehle chiragh jam
Din ke liye yeh cheez hai ya raat ke liye

Mehengai rah raas peh le aai khainch kar
Bachti nahi raqam buri aadat ke liye

Karne ke kaam kyun nahi karte shaoor tum
Kia zindagi mili hai khurafaat ke liye

Kafi nahi khatoot kisi baat ke liye
Tashreef laiye ga mulaqat ke liye
غزل
کافی نہیں خطوط کسی بات کے لئے
تشریف لائیے گا ملاقات کے لئے

دنیا میں کیا کسی سے کسی کو غرض نہیں
ہر کوئی جی رہا ہے فقط ذات کے لئے

ہم بارگاہ ناز میں اس بے نیاز کی
پیدا کئے گئے ہیں شکایات کے لئے

ہیں پتھروں کی زد پہ تمھاری گلی میں ہم
کیا آئے تھے یہاں اُسی برسات کے لئے

اپنی طرف سے کچھ بھی انہوں نے نہیں کہا
ہم نے جواب صرف سوالات کے لئے

روشن کرو نہ شام سے پہلے چراغ جام
دن کے لئے یہ چیز ہے یا رات کے لئے

مہنگائی راہ راس پہ لے آئی کھینچ کر
بچتی نہیں رقم بری عادات کے لئے

کرنے کے کام کیوں نہیں کرتے شعور تم
کیا زندگی ملی ہے خرافات کے لئے

کافی نہیں خطوط کسی بات کے لئے
تشریف لائیے گا ملاقات کے لئے

اپنا تبصرہ بھیجیں