Hamesha der Kar deta Hun

نظم:دیر
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں ہر کام کرنے میں
ضروری بات کہنی ہو کوئی وعدہ نبھانا ہو
اسے آواز دینی ہو اسے واپس بلانا ہو
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں
مدد کرنی ہو اس کی یار کی ڈھارس بندھانا ہو
بہت دیرینہ رستوں پر کسی سے ملنے جانا ہو
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں
بدلتے موسموں کی سیر میں دل کو لگانا ہو
کسی کو یاد رکھنا ہو کسی کو بھول جانا ہو
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں
کسی کو موت سے پہلے کسی غم سے بچانا ہو
حقیقت اور تھی کچھ اس کو جا کے یہ بتانا ہو
ہمیشہ دیر کر دیتا ہوں میں ہر کام کرنے میں
Nazam:Der
Hamesha der kar deta hun main har kaam karne mein
 
zaruri baat kahni ho koi wada nibhana ho
use aawaz deni ho use wapas bulana ho
 
hamesha der kar deta hun main
 
madad karni ho us ki yar ki dhaaras bandhana ho
bahut derina raston par kisi se milne jaana ho
 
hamesha der kar deta hun main
 
badalte mausamon ki sair mein dil ko lagana ho
kisi ko yaad rakhna ho kisi ko bhul jaana ho
 
hamesha der kar deta hun main
 
kisi ko maut se pahle kisi gham se bachana ho
haqiqat aur thi kuchh us ko ja ke ye batana ho
 
hamesha der kar deta hun main har kaam karne mein

اپنا تبصرہ بھیجیں