Yeh Weham Meray Leya Masla Bana Howa Hai

غزل
یہ وہم میرے لیے مسئلہ بنا ہوا ہے
کہیں خدا ہی نہ ہو جو خدا بنا ہوا ہے

کڑی کڑی ملاتا ہوا پہنچتا ہوں
با فضلِ عشق میرا سلسلہ بنا ہوا ہے

زمانے اُس کو اگر توڑنا ضروری ہو
یہ دیکھ لینا میرے ہاتھ کا بنا ہوا ہے

میں اس لیے نکل آیا ہوں دشت غم کی طرف
مجھے لگا تھا اِدھر راستہ بنا ہوا ہے

ہمارے دل میں مرمت کے بعد آئیے گا
تمہیں لگے گا یہ بلکل نیا بنا ہوا ہے
Ghazal
Yeh Weham Meray Leya Masla Bana Howa Hai
Kahaine khuda hi na ho jo khuda bana howa hai

Kari kari milata howa ponchta hun
Ba-fazal-e-ishq mera silsila bana howa hai

Zamany usko agr torana zarori ho to
Yeh dekh lana meray hath ka bana howa hai

Main es leya nikal aya hun dashat e gham ki taraf
Mujhy laga tha idhar rasta bana howa hai

Humaray dil main muhabbat ky bad ayeya ga
Tumhain lagay ga yeh bilkul neya bana howa hai

اپنا تبصرہ بھیجیں