Yeh Safar Raas Mujhe Waisay Bhi Aaya Kam Hai

Yeh Safar Raas Mujhe Waisay Bhi Aaya Kam Hai

Yeh Safar Raas Mujhe Waisay Bhi Aaya Kam Hai
Dhoop rastay mein bohat sari hai saya kam hai

Apni kamzori kisi ko bhi nahi di hum ne
Ishq gehra tha magar uss ko bataya kam hai

Iss ko hum rang-e-shanasaai nahi kehh saktay
Bas woh apna hai tu itna keh paraya kam hai

Ghair danista aziyat ka sabab ban jata
Hum ne danista talluq ko nibhaya kam hai

Iss liye dasht ki manind nazar aati hain
Tum ne aankhon se abhi hijr bahaya kam hai

Jhoot to yeh bhi nahi dukh hai tere janay ka
Sach tu yeh hai keh tera sog manaya kam hai

Mein usay yun bhi mili sakht taraddud ke baghair
So khulay hath kia kharch, bachaya kam hai

Naarsai ka gila hai to faqt itna hai
Woh muyassar meri khwahish se khudaya kam hai

Yeh safar raas mujhe waisay bhi aaya kam hai
Dhoop rastay mein bohat sari hai saya kam hai
غزل
یہ سفر راس مجھے ویسے بھی آیا کم ہے
دھوپ رستے میں بہت ساری ہے سایہ کم ہے

اپنی کمزوری کسی کو بھی نہیں دی ہم نے
عشق گہرا تھا مگر اُس کو بتایا کم ہے

اِس کو ہم رنگِ شناسائی نہیں کہہ سکتے
بس وہ اپنا ہے تو اِتنا کہ پرایا کم ہے

غیر دانستہ اذیت کا سبب بن جاتا
ہم نے دانستہ تعلق کو نبھایا کم ہے

اِس لئے دشت کی مانند نظر آتی ہیں
تم نے آنکھوں سے ابھی ہجر بہایا کم ہے

جھوٹ تو یہ بھی نہیں دکھ ہے ترے جانے کا
سچ تو یہ ہے کہ ترا سوگ منایا کم ہے

میں اُسے یوں بھی ملی سخت تردد کے بغیر
سو کھلے ہاتھ کیا خرچ، بچایا کم ہے

نارسائی کا گِلہ ہے تو فقط اِتنا ہے
وہ میسر مری خواہش سے خدایا کم ہے

یہ سفر راس مجھے ویسے بھی آیا کم ہے
دھوپ رستے میں بہت ساری ہے سایہ کم ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں