Barish ki rut thi raat thi pahlu e yar tha

بارش کی رت تھی رات تھی پہلوئے یار تھا
یہ بھی طلسم گردش لیل و نہار تھا
کہتے ہیں لوگ اوج پہ تھا موسم بہار
دل کہہ رہا ہے عربدۂ زلف یار تھا
اب تو وصال یار سے بہتر ہے یاد یار
میں بھی کبھی فریب نظر کا شکار تھا
تو میری زندگی سے بھی کترا کے چل دیا
تجھ کو تو میری موت پہ بھی اختیار تھا
او گانے والے ٹوٹتے تاروں کے ساز پر
میں بھی شہید طول شب انتظار تھا
پلکیں اٹھیں جھپک کے گریں پھر نہ اٹھ سکیں
یہ اعتبار ہے تو کہاں اعتبار تھا
یزداں سے بھی الجھ ہی پڑا تھا ترا ندیمؔ
یعنی ازل سے دل میں یہی خلفشار تھا
Barish Ki Rut  Thi Raat Thi Pahlu-E-Yar Tha
ye bhi tilism-e-gardish-e-lail-o-nahaar tha
 
kahte hain log auj pe tha mausam-e-bahaar
dil kah raha hai arbada-e-zulf-e-yar tha
 
ab to visal-e-yar se behtar hai yaad-e-yar
main bhi kabhi fareb-e-nazar ka shikar tha
 
tu meri zindagi se bhi katra ke chal diya
tujh ko to meri maut pe bhi ikhtiyar tha
 
o gane wale tutte taron ke saz par
main bhi shahid-e-tul-e-shab-e-intizar tha
 
palken uthin jhapak ke girin phir na uth sakin
ye e’tibar hai to kahan e’tibar tha
 
yazdan se bhi ulajh hi pada tha tera ‘nadim’
yani azal se dil mein yahi khalfashaar tha

اپنا تبصرہ بھیجیں