Har Cheez Dekhte Hain Magar Boltay Nahi

Har Cheez Dekhte Hain Magar Boltay Nahi

Har Cheez Dekhte Hain Magar Boltay Nahi
Tair nahi shajar hain shajar boltay nahi

Hakim ka chahay hukum hon hum jaisay haq parast
Raton ki tergi ko sahar boltay nahi

Kia faida hai iss fan-e-guftaar ka keh aap
Jis ja peh bolna ho udhar boltay nahi

Kuch iss liye bhi hum peh hai hawi ameer-e-shahr
Chup chaap jheltay hain zaroor boltay nahi

Sabit kiya hai khud ko bohat cheekh cheekh kar
Kaisay nazar mein aatay agar boltay nahi

Kia boltay keh to yahan chalta tha saath saath
Taktay hain bas woh rah guzar boltay nahi

Har cheez dekhte hain magar boltay nahi
Tair nahi shajar hain shajar boltay nahi
غزل
ہر چیز دیکھتے ہیں مگر بولتے نہیں
طائر نہیں شجر ہیں ، شجر بولتے نہیں

حاکم کا چاہے حکم ہوں ہم جیسے حق پرست
راتوں کی تیرگی کو سحر بولتے نہیں

کیا فائدہ ہے اِس فنِ گفتار کا کہ آپ
جس جا پہ بولنا ہو اُدھر بولتے نہیں

کچھ اسلئے بھی ہم پہ ہے حاوی امیرِ شہر
چپ چاپ جھیلتے ہیں ضرور بولتے نہیں

ثابت کیا ہے خود کو بہت چیخ چیخ کر
کیسے نظر میں آتے اگر بولتے نہیں

کیا بولتے کہ تو یہاں چلتا تھا ساتھ ساتھ
تکتے ہیں بس وہ راہ گذر بولتے نہیں

ہر چیز دیکھتے ہیں مگر بولتے نہیں
طائر نہیں شجر ہیں ، شجر بولتے نہیں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں