Hawayen Uski Fizayen Uski

نظم
ہوائیں اُس کی فضائیں اُس کی
جہاں اُس کا دیشائیں اُس کی

مجھ جیسے میلے دلوں کی خاطر
چمک رہی ہیں ایشائیں اُس کی

سوائے اِس کے کہ وہ حسیں ہے
کوئی برائی بتائیں اُس کی

جو اُس کو ترسیں وہ مجھ پے برسیں
کہ جان مجھ سے چھوڑایں اُس کی

یہ شراب کیا ہے میں زہربھی پی لوں
زرا توجہ ہٹائیں اُس کی
Nazam
Hawayen Uski Fizayen Uski
Jahaan uska deshayen uski

Mujh jesay melay dilon ki khatir
Chamak rahi hain aashayein

Siwaye es kay k woh hassen hai
Koi buraye batayen uski

Jo us ko tarsay wo mujh py barsay
Keh jaan mujh sy chhuraye uski

Yeh sharab kiya hai main zehr bhi pe lu
Zara tawajoh hataye uski

اپنا تبصرہ بھیجیں