Iblis Ki Majlis-E- Shura

:ابلیس کی مجلس شوریٰ
یہ عناصر کا پرانا کھیل یہ دنیائے دوں
ساکنان عرش اعظم کی تمناؤں کا خوں
اس کی بربادی پہ آج آمادہ ہے وہ کارساز
جس نے اس کا نام رکھا تھا جہان کاف و نوں
میں نے دکھلایا فرنگی کو ملوکیت کا خواب
میں نے توڑا مسجد و دیر و کلیسا کا فسوں
میں نے ناداروں کو سکھلایا سبق تقدیر کا
میں نے منعم کو دیا سرمایہ داری کا جنوں
کون کر سکتا ہے اس کی آتش سوزاں کو سرد
جس کے ہنگاموں میں ہو ابلیس کا سوز دروں
جس کی شاخیں ہوں ہماری آبیاری سے بلند
کون کر سکتا ہے اس نخل کہن کو سرنگوں
پہلا مشیر
اس میں کیا شک ہے کہ محکم ہے یہ ابلیسی نظام
پختہ تر اس سے ہوئے خوئے غلامی میں عوام
ہے ازل سے ان غریبوں کے مقدر میں سجود
ان کی فطرت کا تقاضا ہے نماز بے قیام
آرزو اول تو پیدا ہو نہیں سکتی کہیں
ہو کہیں پیدا تو مر جاتی ہے یا رہتی ہے خام
یہ ہماری سعی پیہم کی کرامت ہے کہ آج
صوفی و ملا ملوکیت کے بندے ہیں تمام
طبع مشرق کے لیے موزوں یہی افیون تھی
ورنہ قوالی سے کچھ کم تر نہیں علم کلام
ہے طواف و حج کا ہنگامہ اگر باقی تو کیا
کند ہو کر رہ گئی مومن کی تیغ بے نیام
کس کی نو میدی پہ حجت ہے یہ فرمان جدید
ہے جہاد اس دور میں مرد مسلماں پر حرام
دوسرا مشیر
خیر ہے سلطانیٔ جمہور کا غوغا کہ شر
تو جہاں کے تازہ فتنوں سے نہیں ہے با خبر
پہلا مشیر
ہوں مگر میری جہاں بینی بتاتی ہے مجھے
جو ملوکیت کا اک پردہ ہو کیا اس سے خطر
ہم نے خود شاہی کو پہنایا ہے جمہوری لباس
جب ذرا آدم ہوا ہے خود شناس و خود نگر
کاروبار شہر یاری کی حقیقت اور ہے
یہ وجود میر و سلطاں پر نہیں ہے منحصر
مجلس ملت ہو یا پرویز کا دربار ہو
ہے وہ سلطاں غیر کی کھیتی پہ ہو جس کی نظر
تو نے کیا دیکھا نہیں مغرب کا جمہوری نظام
چہرہ روشن اندروں چنگیز سے تاریک تر
تیسرا مشیر
روح سلطانی رہے باقی تو پھر کیا اضطراب
ہے مگر کیا اس یہودی کی شرارت کا جواب
وہ کلیم بے تجلی وہ مسیح بے صلیب
نیست پیغمبر ولیکن در بغل دارد کتاب
کیا بتاؤں کیا ہے کافر کی نگاہ پردہ سوز
مشرق و مغرب کی قوموں کے لیے روز حساب
اس سے بڑھ کر اور کیا ہوگا طبیعت کا فساد
توڑ دی بندوں نے آقاؤں کے خیموں کی طناب
چوتھا مشیر
توڑ اس کا رومتہ الکبریٰ کے ایوانوں میں دیکھ
آل سیزر کو دکھایا ہم نے پھر سیزر کا خواب
کون بحر روم کی موجوں سے ہے لپٹا ہوا
گاہ بالد چوں صنوبر گاہ نالد چوں رباب
تیسرا مشیر
میں تو اس کی عاقبت بینی کا کچھ قائل نہیں
جس نے افرنگی سیاست کو کیا یوں بے حجاب
پانچواں مشیر ابلیس کو مخاطب کر کے
اے ترے سوز نفس سے کار عالم استوار
تو نے جب چاہا کیا ہر پردگی کو آشکار
آب و گل تیری حرارت سے جہان سوز و ساز
ابلہ جنت تری تعلیم سے دانائے کار
تجھ سے بڑھ کر فطرت آدم کا وہ محرم نہیں
سادہ دل بندوں میں جو مشہور ہے پروردگار
کام تھا جن کا فقط تقدیس و تسبیح و طواف
تیری غیرت سے ابد تک سر نگوں و شرمسار
گرچہ ہیں تیرے مرید افرنگ کے ساحر تمام
اب مجھے ان کی فراست پر نہیں ہے اعتبار
وہ یہودی فتنہ گر وہ روح مزدک کا بروز
ہر قبا ہونے کو ہے اس کے جنوں سے تار تار
زاغ دشتی ہو رہا ہے ہمسر شاہین و چرغ
کتنی سرعت سے بدلتا ہے مزاج روزگار
چھا گئی آشفتہ ہو کر وسعت افلاک پر
جس کو نادانی سے ہم سمجھے تھے اک مشت غبار
فتنۂ فردا کی ہیبت کا یہ عالم ہے کہ آج
کانپتے ہیں کوہسار و مرغزار و جوئبار
میرے آقا وہ جہاں زیر و زبر ہونے کو ہے
جس جہاں کا ہے فقط تیری سیادت پر مدار
Iblis Ki Majlis-E- Shura:
Ye Anasir Ka Purana Khel Ye Duniya-E-Dun
sakinan-e-arsh-e-azam ki tamannaon ka khun
is ki barbaadi pe aaj aamada hai wo karsaz
jis ne is ka nam rakha tha jahan-e-kaf-o-nun
main ne dikhlaya farangi ko mulukiyat ka khwab
main ne toda masjid-o-dair-o-kalisa ka fusun
main ne nadaron ko sikhlaya sabaq taqdir ka
main ne munim ko diya sarmaya dari ka junun
kaun kar sakta hai is ki aatish-e-sozan ko sard
jis ke hangamon mein ho iblis ka soz-e-darun
jis ki shakhen hon hamari aabiyari se buland
kaun kar sakta hai is nakhl-e-kuhan ko sar-nigun
pahla mushir
is mein kya shak hai ki mohkam hai ye iblisi nizam
pukhta-tar is se hue khu-e-ghulami mein awam
hai azal se in gharibon ke muqaddar mein sujud
in ki fitrat ka taqaza hai namaz-e-be-qayam
aarzu awwal to paida ho nahin sakti kahin
ho kahin paida to mar jati hai ya rahti haikham
ye hamari sai-e-paiham ki karamat hai ki aaj
sufi-o-mulla mulukiyyat ke bande hain tamam
tab-e-mashriq ke liye mauzun yahi afyun thi
warna qawwali se kuchh kam-tar nahin ilm-e-kalam
hai tawaf-o-haj ka hangama agar baqi to kya
kund ho kar rah gai momin ki tegh-e-be-niyam
kis ki nau-midi pe hujjat hai ye farman-e-jadid
hai jihad is daur mein mard-e-musalman par haram
dusra mushir
khair hai sulatani-e-jamhur ka ghaugha ki shar
tu jahan ke taza fitnon se nahin hai ba-khabar
pahla mushir
hun magar meri jahan-bini batati hai mujhe
jo mulukiyat ka ek parda ho kya is se khatar
hum ne khud shahi ko pahnaya hai jamhuri libas
jab zara aadam hua hai khud-shanas-o-khud-nigar
karobar-e-shahryari ki haqiqat aur hai
ye wajud-e-mir-o-sultan par nahin hai munhasir
majlis-e-millat ho ya parwez ka darbar ho
hai wo sultan ghair ki kheti pe ho jis ki nazar
tu ne kya dekha nahin maghrib ka jamhuri nizam
chehra raushan andarun changez se tarik-tar
tisra mushir
ruh-e-sultani rahe baqi to phir kya iztirab
hai magar kya is yahudi ki shararat ka jawab
wo kalim-e-be-tajalli wo masih-e-be-salib
nist paighambar wa-lekin dar baghal darad kitab
kya bataun kya hai kafir ki nigah-e-parda-soz
mashriq-o-maghrib ki qaumon ke liye roz-e-hisab
is se badh kar aur kya hoga tabiat ka fasad
to di bandon ne aaqaon ke khemon ki tanab
chautha mushir
tod is ka rumat-ul-kubra ke aiwanon mein dekh
aal-e-ceaser ko dikhaya hum ne phir ceaser ka khwab
kaun bahr-e-rum ki maujon se hai lipta hua
gah baalad-chun-sanobar gah nalad-chun-rubab
tisra mushir
main to is ki aaqibat-bini ka kuchh qail nahin
jis ne afrangi siyasat ko kya yun be-hijab
panchwan mushir iblis ko mukhatab kar ke
ai tere soz-e-nafas se kar-e-alam ustuwar
tu ne jab chaha kiya har pardagi ko aashkar
aab-o-gil teri hararat se jahan-e-soz-o-saz
ablah-e-jannat teri talim se dana-e-kar
tujh se badh kar fitrat-e-adam ka wo mahram nahin
sada-dil bandon mein jo mashhur hai parwardigar
kaam tha jin ka faqat taqdis-o-tasbih-o-tawaf
teri ghairat se abad tak sar-nigun-o-sharmsar
garche hain tere murid afrang ke sahir tamam
ab mujhe un ki farasat par nahin hai e’tibar
wo yahudi fitna-gar wo ruh-e-mazdak ka buruz
har qaba hone ko hai is ke junun se tar tar
zagh dashti ho raha hai ham-sar-e-shahin-o-chargh
kitni surat se badalta hai mizaj-e-rozgar
chha gai aashufta ho kar wusat-e-aflak par
jis ko nadani se hum samjhe the ek musht-e-ghubar
fitna-e-farda ki haibat ka ye aalam hai ki aaj
kanpte hain kohsar-o-murgh-zar-o-juebar
mere aaqa wo jahan zer-o-zabar hone ko hai
jis jahan ka hai faqat teri siyaadat par madar

اپنا تبصرہ بھیجیں