Hum Milein Ge Kahin

غزل
ہم ملیں گے کہیں اجنبی شہر کی خواب ہوتی ہوئی
شاہراؤِں پہ اور شاہراوں پہ پھیلی ہوئی دھوپ میں
ایک دن ہم کہیں ساتھ ہوں گے
وقت کی آندھیوں سے اٹی ساعتوں پر سے مٹی ہٹاتے ہوئے ایک ہی جیسے آنسو بہاتے ہوئے

ہم ملیں گے گھنے جنگلوں کی ہری گھاس پر
اور کسی شاخ نازک پہ پڑتے ہوئے بوجھ کی داستانوں میں کھو جائیں گے
ہم صنوبر کے پیڑوں کے نوکیلے پتوں سے صدیوں سے سوئے ہوئے دیوتاوں کی آنکھیں چبھو جائیں گے

ہم ملیں گے کہیں برف کے بازوؤں میں گھرے پربتوں پر
‏بانجھ قبروں میں لیٹے ہوئے کوہ پیماؤں کی یاد میں نظم کہتے ہوئے
جو پہاڑوں کی اولاد تھےاور انہیں وقت آنے پہ ماں باپ نے اپنی آغوش میں لے لیا

ہم ملیں گے شاہ سلیمان کے عرس میں
حوض کی سیڑھیوں پر وضو کرنے والوں کے شفاف چہروں کے آگے
سنگ مرمر سے آراستہ فرش پر پیر رکھتے ہوئےآہ بھرتے ہوئے
‏اور درختوں کو منت کے دھاگوں سے آزاد کرتے ہوئے
‏ہم ملیں گے

Ghazal

Hum Milein Ge Kahin
ajnabi shehar ki khawab hoti hui
shahrahon pay aur shahraon pay phaili hui
dhoop mein
aik din hum kahin sath hon ge
waqt ki aandhiyon se atti‬ sa-aton par se matti hatatay hue aik hi jaisay aansoo bahatye hue

hum milein ge ghany junglon ki hari ghaas par
aur kisi shaakh naazuk pay parte hue boojh ki dastanoon mein kho jayen gay
hum Sanober ke pairon ke nokeelay patton sy sadiiyon se soye hue deyotaon ki ankhen chabho jayen ge

hum milein ge kahin barf ke baazuon mein ghiry parbatoon par
banj qabron mein letey hue koh pimaon ki yaad mein nazam kehte hue
jo pahoron ki aulaad thay aur inhen waqt anay pay maa baap ne apni agosh mein le liya

hum milein ge Shah Sulaiman ke Uras mein
hoz ki seerihoon par wudu karne walon ke shafaaf cheharon ke agay
sang mar-mar se aarasta farsh par paiir rakhtay hue aah bhartay hue
our darakhton ko minnat ke dhagon se azad karte hue
hum milein ge

اپنا تبصرہ بھیجیں