Un Se Tanhai Mein Baat Hoti Rahi

غزل
ان سے تنہائی میں بات ہوتی رہی
غائبانہ ملاقات ہوتی رہی
 
ہم بلاتے وہ تشریف لاتے رہے
خواب میں یہ کرامات ہوتی رہی
 
کاسۂ چشم لبریز ہوتی رہی
اس دریچے سے خیرات ہوتی رہی
 
دل بھی زور آزمائی سے ہارا نہیں
گرچہ ہر مرتبہ مات ہوتی رہی
 
سر بچائے رہا صبر کا سائباں
آسماں سے تو برسات ہوتی رہی
 
گو محبت سے ہم جی چراتے رہے
زندگی بھر یہ بد ذات ہوتی رہی
 
شہر بھر میں پھرایا گیا قیس کو
کوچے کوچے مدارات ہوتی رہی
 
جاگتے اور سوتے رہے ہم شعورؔ
دن نکلتا رہا رات ہوتی رہی
Ghazal
Un Se Tanhai Mein Baat Hoti Rahi
Ghaebana mulaqat hoti rahi

Hum bulate wo tashrif late rahe
Khwab mein ye karamat hoti rahi

Kasa-e-chashm labrez hoti rahi
Us dariche se khairaat hoti rahi

Dil bhi zor-azmai se haara nahin
Garche har martaba mat hoti rahi

Sar bachae raha sabr ka saeban
Aasman se to barsat hoti rahi

Go mohabbat se hum ji churaate rahe
Zindagi bhar ye bad-zat hoti rahi

Shahr bhar mein phiraya gaya qais ko
Kuche kuche mudaraat hoti rahi

Jagte aur sote rahe hum ‘shuur’
Din nikalta raha raat hoti rahi

اپنا تبصرہ بھیجیں