Ye Kab Kaha Tha Nazaron Se Khauf Aata Hai

غزل
یہ کب کہا تھا نظاروں سے خوف آتا ہے
مجھے تو چاند ستاروں سے خوف آتا ہے

میں دشمنوں کے کسی وار سے نہیں ڈرتا
مجھے تو اپنے ہی یاروں سے خوف آتا ہے

خزاں کا جبر تو سینے پہ روک لیتے ہیں
ہمیں اداس بہاروں سے خوف آتا ہے

ملے ہیں دوستو بیساکھیوں سے غم اتنے
مرے بدن کو سہاروں سے خوف آتا ہے

میں التفات کی خندق سے دور رہتا ہوں
تعلقات کے غاروں سے خوف آتا ہے
Ghazal
Ye Kab Kaha Tha Nazaron Se Khauf Aata Hai
Mujhe to chand sitaron se khauf aata hai

Mein dushmanon ke kisi war se nahin darta
Mujhe to apne hi yaron se khauf aata hai

Khizan ka jabr to sine pe rok lete hain
Hamein udas bahaaron se khauf aata hai

Mile hain dosto baisakhiyon se gham itne
Mere badan ko sahaaron se khauf aata hai

Main iltifat ki khandaq se dur rahta hun
Talluqat ke ghaaron se khauf aata hai

اپنا تبصرہ بھیجیں