Kab Talak Yun Dhup Chhanw Ka Tamasha Dekhna

کب تلک یوں دھوپ چھاؤں کا تماشا دیکھنا
دھوپ میں پھرنا گھنے پیڑوں کا سایا دیکھنا
ساتھ اس کے کوئی منظر کوئی پس منظر نہ ہو
اس طرح میں چاہتا ہوں اس کو تنہا دیکھنا
رات اپنے دیدۂ گریاں کا نظارہ کیا
کس سے پوچھیں خواب میں کیسا ہے دریا دیکھنا
اس گھڑی کچھ سوجھنے دے گی نہ یہ پاگل ہوا
اک ذرا آندھی گزر جائے تو حلیہ دیکھنا
کھل کے رو لینے کی فرصت پھر نہ اس کو مل سکی
آج پھر انورؔ ہنسے گا بے تحاشا دیکھنا
Kab Talak Yun Dhup Chhanw Ka Tamasha Dekhna
dhup mein phirna ghane pedon ka saya dekhna
 
sath us ke koi manzar koi pas-e-manzar na ho
is tarah main chahta hun us ko tanha dekhna
 
raat apne dida-e-giryan ka nazzara kiya
kis se puchhen khwab mein kaisa hai dariya dekhna
 
is ghadi kuchh sujhne degi na ye pagal hawa
ek zara aandhi guzar jae to huliya dekhna
 
khul ke ro lene ki fursat phir na us ko mil saki
aaj phir ‘anwar’ hansega be-tahasha dekhna
 

اپنا تبصرہ بھیجیں