Bhai Nah Ghar Nah Mal Nah Dar Rakh Raha

Bhai Nah Ghar Nah Mal Nah Dar Rakh Raha

Bhai Nah Ghar Nah Mal Nah Dar Rakh Raha Hoon Mein
Rakh lo yeh kaaghzat yeh idhar rakh raha hoon mein

Ab se teri chhaon mein loonga har aik saans
Ab se tera naam shajar rakh raha hoon mein

Dono ko uss ki fikar hai bas ik farq hai
Tum aankh rakh rahe ho nazar rakh raha hoon mein

Pagri ka to riwaj nahi hai ab hamare haan
Yeh lo tumhare paon mein sar rakh raha hoon mein

Bhai nah ghar nah mal nah dar rakh raha hoon mein
Rakh lo yeh kaaghzat yeh idhar rakh raha hoon mein

Bhai nah ghar nah mal nah dar rakh raha hoon mein
Rakh lo yeh kaaghzat yeh idhar rakh raha hoon mein
غزل
بھائی نہ گھر نہ مال نہ در رکھ رہا ہوں میں
رکھ لو یہ کاغذات یہ اِدھر رکھ رہا ہوں میں

اب سے تیری چھاؤں میں لوں گا ہر ایک سانس
اب سے تیرا نام شجر رکھ رہا ہوں میں

دونوں کو اُس کی فکر ہے بس اک فرق ہے
تم آنکھ رکھ رہے ہو نظر رکھ رہا ہوں میں

پگڑی کا تو رواج نہیں ہے اب ہمارے ہاں
یہ لو تمہارے پاؤں میں سر رکھ رہا ہوں میں

بھائی نہ گھر نہ مال نہ در رکھ رہا ہوں میں
رکھ لو یہ کاغذات یہ اِدھر رہا ہوں میں

بھائی نہ گھر نہ مال نہ در رکھ رہا ہوں میں
رکھ لو یہ کاغذات یہ اِدھر رہا ہوں میں

اپنا تبصرہ بھیجیں