Pehlay Pehal Laray Gay Tamaskhr Udaiin Gay

Pehlay Pehal Laray Gay Tamaskhr Udaiin Gay

Ghazal :
Pehlay Pehal Laray Gay Tamaskhr Udaen Gay
Jab ishq dekh lain gay tou sar per bethaen gay

Tu tou phir apni jaan hai tera to zikar kia
Hum teray doston ky bhi nakhray uthaen gay

Yeh ehtamam aur kise ke liye nahi
Tanay tumhary naam ke hum per hi aen gay

Qibla kabhi tou taza sukhan bhi kare atta
Yeh chaar panch ghazalin hi kab tak sunaaen gay

Pehlay Pehal Laray Gay Tamaskhr Udaiin Gay
Jab ishq dekh lain gay tou sar per bethaen gay
غزل
پہلے پہل لڑئے گئے تمسخر اُڑائیں گئے
جب عشق دیکھ لیں گئے تو سر پر بٹھائیں گئے

تو تو پھر اپنی جان ہے تیرا تو زکر کیا
ہم تیرے دوستوں کے بھی نخرے اٹھائیں گئے

یہ اہتمام اور کسی کے لیے نہیں
طعنے تمہارے نام کے ہم پر ہی آئیں گئے

قبلہ کبھی تو تازہ سخن بھی کرے عطا
یہ چار پانچ غزلیں ہی کب تک سنائیں گئے

اپنا تبصرہ بھیجیں