Baitha Ke Apne Qareeb Uthaaya Kabhi Kisi Ne

 Ghazal
Baitha Ke Apne Qareeb Uthaaya Kabhi Kisi Ne Kabhi Kisi Ne
Hamain akila kiya khudiya , kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Na es nazar ne koi kami ki na us nazar ne koi kami ki
Jigar pe teer e sitam chlaya kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Sanam kado mein hamesha hum ne buland rakhi azan apni
Bahut mukafat se daraaya kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Hatay nahi apne rastay se hum ,ahl e dunya o dain mein rah kar
Humara eiman azmaya, kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Salies o sada ghazal ke fan mein , rahe yagana hum anjoman main
Agar-chay rang e sukhan udaaya, kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Jo razdari ke sath sun kar gaye thay anwar shoor sahib
Wo qisa a kar humain sunya kabhi kisi ne kabhi kisi ne

Baitha ke apne qareeb uthaaya kabhi kisi ne kabhi kisi ne
Hamain akila kiya khudiya , kabhi kisi ne kabhi kisi ne
 غزل
بیٹھا کے اپنے قریب اُٹھایا کبھی کسی نے کبھی کسی نے
ہمیں اکیلا کیا خدایا ، کبھی کسی نے کبھی کسی نے

نہ اِس نظر نے کوئی کمی کی ،نہ اُس نطر نے کوئی کمی کی
جگر پر تِیر ستم چلایا ،کبھی کسی نے کبھی کسی نے

صنم کدو میں ہمیشہ ہم نے بلند رکھی ازان اپنی
بہت مکافات سے ڈرایا کبھی کسی نے کبھی کسی نے

ہٹے نہیں اپنے راستے سے ہم ، اہل دنیا و دیں میں رہ کر
ہمارا ایمان آزمایا ، کبھی کسی نے کبھی کسی نے

سلیس و سادہ غزل کے فن میں ، رہے یگانہ ہم انجمن میں
اگرچے رنگِ سخن اُڑایا، کبھی کسی نے کبھی کسی نے

جو رازداری کے ساتھ سن کر گئے تھے انور شؔعور صاحب
وہ قصہ آکر ہمیں سنایا ،کبھی کسی نے کبھی کسی نے

بیٹھا کے اپنے قریب اُٹھایا کبھی کسی نے کبھی کسی نے
ہمیں اکیلا کیا خدایا ، کبھی کسی نے کبھی کسی نے

اپنا تبصرہ بھیجیں