Aadmi Ishq Mein Bachchon Ki Tarah Hota Hai

غزل
ٹوٹ جانے میں کھلونوں کی طرح ہوتا ہے
آدمی عشق میں بچوں کی طرح ہوتا ہے
اس لئے مجھ کو پسند آتا ہے صحرا کا سکوت
اس کا نشہ تری باتوں کی طرح ہوتا ہے
ہم جسے عشق میں دیتے ہیں خدا کا منصب
پہلے پہلے ہمیں لوگوں کی طرح ہوتا ہے
جس سے بننا ہو تعلق وہی ظالم پہلے
غیر ہوتا ہے نہ اپنوں کی طرح ہوتا ہے
چاندنی رات میں سڑکوں پہ قدم مت رکھنا
شہر جاگے ہوئے ناگوں کی طرح ہوتا ہے
بس یہی دیکھنے کو جاگتے ہیں شہر کے لوگ
آسماں کب تری آنکھوں کی طرح ہوتا ہے
اس سے کہنا کہ وہ ساون میں نہ گھر سے نکلے
حافظہ عشق کا سانپوں کی طرح ہوتا ہے
اس کی آنکھوں میں امڈ آتے ہیں آنسو تابشؔ
وہ جدا چاہنے والوں کی طرح ہوتا ہے
Ghazal
Tut Jaane Mein Khilaunon Ki Tarah Hota Hai
Aadmi Ishq Mein Bachchon Ki Tarah Hota Hai
Is liye mujh ko pasand aata hai sahra ka sukut
Is ka nashsha teri baaton ki tarah hota hai
Hum jise ishq mein dete hain khuda ka mansab
Pahle pahle hamein logon ki tarah hota hai
Jis se banna ho talluq wahi zalim pahle
Ghair hota hai na apnon ki tarah hota hai
Chandni-raat mein sadkon pe qadam mat rakhna
Shahr jage hue nagon ki tarah hota hai
Bas yahi dekhne ko jagte hain shahr ke log
Asman kab teri aankhon ki tarah hota hai
Us se kahna ki wo sawan mein na ghar se nikle
Hafiza ishq ka sanpon ki tarah hota hai
Us ki aankhon mein umad aate hain aansu ‘tabish’
Wo juda chahne walon ki tarah hota hai

اپنا تبصرہ بھیجیں