Kash Main Tere Hasin Hath Ka Kangan Hota

نظم
کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا
تو بڑے پیار سے چاؤ سے بڑے مان کے ساتھ
 
اپنی نازک سی کلائی میں چڑھاتی مجھ کو
اور بیتابی سے فرقت کے خزاں لمحوں میں
 
تو کسی سوچ میں ڈوبی جو گھماتی مجھ کو
میں ترے ہاتھ کی خوشبو سے مہک سا جاتا
 
جب کبھی موڈ میں آ کر مجھے چوما کرتی
تیرے ہونٹوں کی میں حدت سے دہک سا جاتا
 
رات کو جب بھی تو نیندوں کے سفر پر جاتی
مرمریں ہاتھ کا اک تکیہ بنایا کرتی
 
میں ترے کان سے لگ کر کئی باتیں کرتا
تیری زلفوں کو ترے گال کو چوما کرتا
 
جب بھی تو بند قبا کھولنے لگتی جاناں
اپنی آنکھوں کو ترے حسن سے خیرہ کرتا
 
مجھ کو بیتاب سا رکھتا تری چاہت کا نشہ
میں تری روح کے گلشن میں مہکتا رہتا
 
میں ترے جسم کے آنگن میں کھنکتا ہوتا
کچھ نہیں تو یہی بے نام سا بندھن ہوتا
کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا
 

NAZAM

Kash Main Tere Hasin Hath Ka Kangan Hota
Tu bade pyar se chaw se bade man ke sath
 
Apni nazuk si kalai mein chadhati mujh ko
Aur betabi se furqat ke khizan lamhon mein
 
Tu kisi soch mein dubi jo ghumati mujh ko
Main tere hath ki khushbu se mahak sa jata
 
Jab kabhi mood mein aa kar mujhe chuma karti
Tere honton ki mein hiddat se dahak sa jata
 
Raat ko jab bhi tu nindon ke safar par jati
Marmarin hath ka ek takiya banaya karti
 
Main tere kan se lag kar kai baatein karta
Teri zulfon ko tere gal ko chuma karta
 
Jab bhi tu band-e-qaba kholne lagti jaanan
Apni aankhon ko tere husn se khira karta
 
Mujh ko betab sa rakhta teri chahat ka nasha
Main teri ruh ke gulshan mein mahakta rahta
 
Main tere jism ke aangan mein khanakta hota
Kuchh nahin to yahi be-nam sa bandhan hota
Kash main tere hasin hath ka kangan hota

اپنا تبصرہ بھیجیں