Bachpan Ki Galiyon Mein Jin Gharon

Bachpan Ki Galiyon Mein Jin Gharon

Bachpan Ki Galiyon Mein Jin Gharon Ke Sheeshay Mere Gaind Se Totay Thay
Un sab ki karche kabhi kabhi meri aankhon mein chubne lagti hain

Jalti dopaher mein mere hathon ujre howay ghonslon ke be haal paridon ki
Chekhen faryaden mere be ghar shamon mein kehram machati rehti hain

Chikna choor dinno raiza raiza ratoon mein soye howay sab khwab jagati rahti hain
Apne khanjar apne hi seene mein utarne lagte hain

Zinda chehre jalte bujhte lamhon ki aaghosh mein lagte hain
Bachpan ki galiyon mein jin gharon ke sheeshay mere gaind se totay thay
نظم
بچپن کی گلیوں میں جن جن گھروں کے شیشے میرے گیند سے ٹوٹے تھے
اُن سب کی کرچیں کبھی کبھی میری آنکھوں میں چبھنے لگتی ہیں

جلتی دوپہروں میں میرے ہاتھوں اجڑے ہوئے گھونسلوں کے بے حال پرندوں کی
چیخیں فریادیں میرے بے گھر شاموں میں کہرام مچاتی رہتی ہیں

چکناچور دنوں ریزہ ریزہ راتوں میں سوئے ہوئے سب خواب جگاتی رہتی ہیں
اپنے خنجر اپنے ہی سینے میں اترنے لگتے ہیں

زندہ چہرے جلتے بجھتے لمحوں کی آغوش میں مرنے لگتے ہیں
بچپن کی گلیوں میں جن جن گھروں کے شیشے میرے گیند سے ٹوٹے تھے

اپنا تبصرہ بھیجیں