Yaad Hai Pehle Roz Kaha Tha| Ghazal Shayari

Yaad Hai Pehle Roz Kaha Tha| Ghazal Shayari

Yaad Hai Pehle Roz Kaha Tha
Phir nah kehna ghalti dil ki

Pyar samajh ke karna larki
Pyar nibhana hota hai

Phir paar lagana hota hai
Yaad pehle roz kaha tha

Saath chalo tou pure safar tak
Marjane ki agli khabar tak

Samjho yar khuda tak hoga
Sara pyar wafa tak hoga

Phir yeh bandhan torr nah jana
Chhor gaye to phir nah aana

Chhor diya jo tera nahi hai
Chala gaya jo mera nahi hai

Yaad hai pehle roz kaha tha
Ya to toot ke pyar nah karna
Ya phir peeth pe war nah karna

Jab nadani ho jati hai
Nayi kahani ho jati hai

Nayi kahani likh lawunga
Agle roz mein bik jawunga

Tere gul jab khil jayenge
Mujh ko paise mil jayenge

Yaad hai pehle roz kaha tha
Bichhar gaye tou mauj urana

Waps mere pass na aana
Jab koi ja kar waps aaye
Roye tarpe ya pachhtaye

Mein phir us ko milta nahi hoon
Saath dubara chalta nahi hoon

Gum jata hoon khoo jata hoon
Mein pathar ka ho jata hoon
Yaad hai pehle roz kaha tha
نظم
یاد ہے پہلے روز کہا تھا
پھر نہ کہنا غلطی دل کی

پیار سمجھ کے کرنا لڑکی
پیار نبھانا ہوتا ہے

پھر پار لگانا ہوتا ہے
یاد ہے پہلے روز کہا تھا

ساتھ چلو تو پورے سفر تک
مر جانے کی اگلی خبر تک

سمجھو یار خدا تک ہوگا
سارا پیار وفا تک ہوگا

پھر یہ بندھن توڑ نہ جانا
چھوڑ گئے تو پھر نہ آنا

چھوڑ دیا جو تیرا نہیں ہے
چلا گیا جو میرا نہیں ہے
یاد ہے پہلے روز کہا تھا

یا تو ٹوٹ کے پیارنہ کرنا
یا پھر پیٹھ پے وار نہ کرنا

جب نادانی ہو جاتی ہے
نئی کہانی ہو جاتی ہے

نئی کہانی لکھ لاؤں گا
اگلے روز میں بِک جاؤں گا

تیرے گل جب کھل جائیں گے
مجھ کو پیسے مل جائیں گے
یاد ہے پہلے روز کہا تھا

بچھڑ گئے تو موج اڑانا
واپس میرے پاس نا آنا

جب کوئی جا کر واپس آئے
روئے تڑپے یا پچھتائے

میں پھر اس کو ملتا نہیں ہوں
ساتھ دوبارہ چلتا نہیں ہوں

گم جاتا ہوں کھو جاتا ہوں
میں پتھر کا ہو جاتا ہوں
یاد ہے پہلے روز کہا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں