Tumhein Khayal-E-Zat Hai Shoor-E-Zat Hi Nahi

غزل
تمہیں خیال ذات ہے شعور ذات ہی نہیں
خطا معاف یہ تمہارے بس کی بات ہی نہیں

غزل فضا بھی ڈھونڈتی ہے اپنے خاص رنگ کی
ہمارا مسئلہ فقط قلم دوات ہی نہیں

ہماری ساعتوں کے حصہ دار اور لوگ ہیں
ہمارے سامنے فقط ہماری ذات ہی نہیں

ورق ورق پہ ڈائری میں آنسوؤں کا نم بھی ہے
یہ صرف بارشوں سے بھیگے کاغذات ہی نہیں

کہانیوں کا روپ دے کے ہم جنہیں سنا سکیں
ہماری زندگی میں ایسے واقعات ہی نہیں

کسی کا نام آ گیا تھا یوں ہی درمیان میں
اب اس کا ذکر کیا کریں جب ایسی بات ہی نہیں
Ghazal
Tumhein Khayal-E-Zat Hai Shoor-E-Zat Hi Nahi
khata muaf ye tumhaare bas ki baat hi nahi

ghazal faza bhi dhundti hai apne khas rang ki
hamara masala faqat qalam dawat hi nahi

hamari saaton ke hissa-dar aur log hain
hamare samne faqat hamari zat hi nahi

waraq waraq pe diary mein aansuon ka nam bhi hai
ye sirf barishon se bhige kaghzat hi nahi

kahaniyon ka rup de ke hum jinhen suna saken
hamari zindagi mein aise waqiat hi nahi

kisi ka nam aa gaya tha yunhi darmiyan mein
ab is ka zikr kya karen jab aisi baat hi nahi

اپنا تبصرہ بھیجیں