Dil Dikhta Hai 

دل دکھتا ہے

آباد گھروں سے دور کہیں 

جب بنجر بن میں آگ جلے 

دل دکھتا ہے 

پردیس کی بوجھل راہوں میں 

جب شام ڈھلے 

دل دکھتا ہے 

جب رات کا قاتل سناٹا 

پر ہول فضا کے وہم لیے 

قدموں کی چاپ کے ساتھ چلے 

دل دکھتا ہے

Dil Dikhta Hai 

Aabaad gharon se dur kahin 

jab banjar ban mein aag jale 

dil dukhta hai 

pardes ki bojhal rahon mein 

jab sham Dhale 

dil dukhta hai 

jab raat ka qatil sannaTa 

pur-haul faza ke wahm liye 

qadmon ki chap ke sath chale 

dil dukhta hai 

اپنا تبصرہ بھیجیں