Yeh Kia Khak Howay Ham Jahaan, Wahen Ke Nahi

Yeh Kia Khak Howay Ham Jahaan, Wahen Ke Nahi

Yeh Kia Khak Howay Ham Jahaan, Wahen Ke Nahi
Jo ham yahan ke nahi hain tu phir kahin ke nahi

Wafa sarshat mein hoti tou samne aati
Wo kia falak se nibhayenge jo zamen ke nahi

Hawa ki garam kharami se par rahe hai bhanwar
Ye peech-o-taab kes mooj-e-tah nasheen ke nahi

Suna gaya hai keh aksar qayam-o-zikar-o-sujud
Hain jis ke naam usi jaan-e-Afreen ke nahi

Tamam umer phiraye dar badar keh ghar ho jaye
Gharon mein rehna bhi taqdeer mein unhi ke nahi

Bikhar rahe hain jo ansoo baghair minnat-e-dost
Wo daamanon ki amanat hain, asteen ki nahi

Yeh kia khak howay ham jahaan, wahen ke nahi
Jo ham yahan ke nahi hain tu phir kahin ke nahi
غزل
یہ کیا کہ خاک ہوئے ہم جہاں،وہیں کے نہیں
جو ہم یہاں کے نہیں ہیں تو پھر کہیں کے نہیں

وفا سرشت میں ہوتی تو سامنے آتی
وہ کیا فلک سے نبھائیں گے جو زمین کے نہیں

ہواکی گرم خرامی سے پڑ رہے ہیں بھنور
یہ پیچ وتاب کیس موجِ تہ نشیں کے نہیں

سنا گیا ہے کہ اکثر قیام و ذکر و سجود
ہیں جس کے نام اُسی جانِ آفریں کے نہیں

تمام عمر پھرے در بدر، کہ گھر ہوجائے
گھروں میں رہنا بھی تقدیر میں اُنہیں کے نہیں

بکھر رہے ہیں جو آنسو بغیر منت دوست
وہ دامنوں کی امانت ہیں، آستیں کے نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں