Tilism-Zar-E-Shab-E-Mah Mein Guzar Jae

غزل
طلسم زار شب ماہ میں گزر جائے
اب اتنی رات گئے کون اپنے گھر جائے

عجب نشہ ہے ترے قرب میں کہ جی چاہے
یہ زندگی تری آغوش میں گزر جائے

میں تیرے جسم میں کچھ اس طرح سما جاؤں
کہ تیرا لمس مری روح میں اتر جائے

مثال برگ خزاں ہے ہوا کی زد پہ یہ دل
نہ جانے شاخ سے بچھڑے تو پھر کدھر جائے

میں یوں اداس ہوں امشب کہ جیسے رنگ گلاب
خزاں کی چاپ سے بے ساختہ اتر جائے

ہوائے شام جدائی ہے اور غم لاحق
نہ جانے جسم کی دیوار کب بکھر جائے

اگر نہ شب کا سفر ہو ترے حصول کی شرط
فروغ مہر ترا اعتبار مر جائے
Ghazal
Tilism-Zar-E-Shab-E-Mah Mein Guzar Jae
Ab itni raat gae kaun apne ghar jae

Ajab nasha hai tere qurb mein ki ji chahe
Ye zindagi teri aaghosh mein guzar jae

Main tere jism mein kuchh is tarah sama jaun
Ki tera lams meri ruh mein utar jae

Misal-e-barg-e-khizan hai hawa ki zad pe ye dil
Na jaane shakh se bichhde to phir kidhar jae

Main yun udas hun imshab ki jaise rang-e-gulab
Khizan ki chap se be-sakhta utar jae

Hawa-e-sham-e-judai hai aur gham lahaq
Na jaane jism ki diwar kab bikhar jae

Agar na shab ka safar ho tere husul ki shart
Farogh-e-mahr tera e’tibar mar jae

اپنا تبصرہ بھیجیں