Bhara Howa Tha Mein Khud Se Nahi Thi Khaali

Bhara Howa Tha Mein Khud Se Nahi Thi Khaali

Bhara Howa Tha Mein Khud Se Nahi Thi Khaali Jagah
Phir uss ne aa kay hataya zara banali jagah

Tou uss ke dil mein jagah chahta hai yaar jo shakhs
Kisi ko deta nahi apne saath wali jagah

Shajar ko ishq howa aasmani bejli se
Phir aik shab woh mili, dekh idhar , woh kali jagah

Ghuttan thi rooh ko kafi nahi tha aik badan
So aik aur badan jor kar barhali jagah

Mein sochta hoon pata doon teri jagah ka unhein
Jo sochtay hain keh jannnat hai ik khayali jagah

Kuch aisi bheer thi mujh mein meri jagah nah bachi
Tou dekh phir abhi tere wastay bachali jagah

Junoon ki khaak udaasi ki dhoop hijr ka num
Yeh dil hai gham ki namu ke liye misali jagah

Jagah nahi thi naye khawab ke liye bilkul
So num nikal kar aankhon se kuch nikali jagah

Mera zameen peh yeh pehla safar nahi hai umair
Keh har jagah mujhe lagti hai dekhi bhali jagah

Bhara howa tha mein khud se nahi thi khaali jagah
Phir uss ne aa kay hataya zara banali jagah
غزل
بھرا ہوا تھا میں خود سے، نہیں تھی خالی جگہ
پھر اُس نے آکے ہٹایا ذرا، بنالی جگہ

تو اُس کے دل میں جگہ چاہتا ہے یار جو شخص
کسی کو دیتا نہیں اپنے ساتھ والی جگہ

شجر کو عشق ہوا، آسمانی بجلی سے
پھر ایک شب وہ ملے، دیکھ اِدھر، وہ کالی جگہ

گھٹن تھی ، روح کو کافی نہیں تھا ایک بدن
سو ایک اور بدن جوڑ کر بڑھالی جگہ

میں سوچتا ہوں، پتہ دوں تری جگہ کا اُنہیں
جو سوچتے ہیں کہ جنت ہے اک خیالی جگہ

کچھ ایسی بھیڑ تھی، مجھ میں مری جگہ نہ بچی
تو دیکھ پھر بھی ترے واسطے بچالی جگہ

جنوں کی خاک، اداسی کی دھوپ، ہجر کا نم
یہ دل ہے غم کی نمو کے لئے مثالی جگہ

جگہ نہیں تھی نئے خواب کے لئے بالکل
سو نم نکال کر آنکھوں سے کچھ نکالی جگہ

مرا زمیں پہ یہ پہلا سفر نہیں ہے عمیر
کہ ہر جگہ مجھے لگتی ہے دیکھی بھالی جگہ

بھرا ہوا تھا میں خود سے، نہیں تھی خالی جگہ
پھر اُس نے آکے ہٹایا ذرا، بنالی جگہ
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں