Safar Aur hum safar

سفر اور ہمسفر :
جنگل جنگل آگ لگی ہے بستی بستی ویراں ہے
کھیتی کھیتی راکھ اڑتی ہے دنیا ہے کہ بیاباں ہے
سناٹے کی ہیبت نے سانسوں میں پکاریں بھر دی ہیں
ذہنوں میں مبہوت خیالوں نے تلواریں بھر دی ہیں
قدم قدم پر جھلسے جھلسے خواب پڑے ہیں راہوں میں
صبح کو جیسے کالے کالے دئیے عبادت گاہوں میں
ایک اک سنگ میل میں کتنی آنکھیں ہیں پتھرائی ہوئی
ایک اک نقش قدم میں کتنی رفتاریں کفنائی ہوئی
ہم سفرو اے ہم سفرو کچھ اور بھی نزدیک آ کے چلو
جب چلنا ہی مقدر ٹھہرا ہاتھ میں ہاتھ ملا کے چلو
: Safar Aur hum safar
jangal jangal aag lagi hai basti basti viran hai
kheti kheti rakh udti hai duniya hai ki bayaban hai

sannate ki haibat ne sanson mein pukaren bhar di hain
zehnon mein mabhut khayalon ne talwaren bhar di hain

qadam qadam par jhulse jhulse khwab pade hain rahon mein
subh ko jaise kale kale diye ibaadat-gahon mein

ek ek sang-e-mil mein kitni aankhen hain pathrai hui
ek ek naqsh-e-qadam mein kitni raftaren kafnai hui

ham-safro ai ham-safro kuchh aur bhi nazdik aa ke chalo
jab chalna hi muqaddar thahra hath mein hath mila ke chalo

اپنا تبصرہ بھیجیں