Ab Es Mein Kawish Koi Na Kuch Ihtimam Mera

Ab Es Mein Kawish Koi Na Kuch Ihtimam Mera

Ab Es Mein Kawish Koi Na Kuch Ihtimam Mera
Hawayein mehfoz kar rahi hain kalam mera

Tou kia yahi ek guman hai har sukhan ki bunyad
Keh had tar nafs se aagay ho naam mera

Jo lala-o-gul ko khar-o-khas se juda nah kar paye
Har aise mausam ko door hi se salam mera

Chala tou hoon ek manzil khosh khabar ki janib
Ajab nahi yeh sagar bhi ho na tamam mera

Dillon ko taraj karne aaya tha tamkanat se
Palat geya mujh ko dekh kar khosh kharam mera

Yeh mera dushman youn nahi tou paspa nahi howay hain
Koi tu hai lay raha hai jo intiqam mera

Yeh qatal namay peh dastakht tu mere nahi hain
Magar yeh khalq khuda ho leti hai naam mera

Mein do karemon ke bab nimat se munsalik hoon
So khud bakhud ho raha hai sab intizam mera

Mein sarkashi se supardgi ki tarf chala hoon
Khuda jo chahay tou yeh bhi ban jaye kam mera

Duayen marhon sajda shukar hain wagarna
Na kuch hazori na kuch salam-o-qiyaam mera

Ab es mein kawish koi na kuch ihtimam mera
Hawayein mehfoz kar rahi hain kalam mera
غزل
اب اس میں کاوش کوئی نہ کچھ اہتمام میرا
ہوائیں محفوظ کر رہی ہیں کلام میرا

تو کیا یہی اک گمان ہے ہر سخن کی بنیاد
کہ حد تارِ نفس سے آگے ہو نام میرا

جو لالہ و گل کو خار وخس سے جدا نہ کر پائے
ہر ایسے موسم کو دور ہی سے سلام میرا

چلا تو ہوں ایک منزل خوش خبر کی جانب
عجب نہیں یہ سفر بھی ہو نا تمام میرا

دلوں کو تاراج کرنے آیا تھا تمکنت سے
پلٹ گیا مجھ کو دیکھ کر خوش خرام میرا

یہ میرے دشمن یو نہی تو پسپا نہیں ہوئے ہیں
کوئی تو ہے لے رہا ہے جو انتقام میرا

یہ قتل نامے پہ دستخط تو مرے نہیں ہیں
مگر یہ خلقِ خدا جو لیتی ہے نام میرا

میں دو کریموں کے باب نعمت سے منسلک ہوں
سو خود بخود ہو رہا ہے سب انتظام میرا

میں سرکشی سے سپردگی کی طرف چلا ہوں
خدا جو چاہے تو یہ بھی بن جائے کام میرا

دعائیں مرہون سجدہ شکر ہیں وگرنہ
نہ کچھ حضوری نہ کچھ سلام و قیام میرا

اب اس میں کاوش کوئی نہ کچھ اہتمام میرا
ہوائیں محفوظ کر رہی ہیں کلام میرا

اپنا تبصرہ بھیجیں