Is Se Pehle Ke Be Wafa Ho Jayen

اس سے پہلے کہ بے وفا ہو جائیں
کیوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائیں
تو بھی ہیرے سے بن گیا پتھر
ہم بھی کل جانے کیا سے کیا ہو جائیں
تو کہ یکتا تھا بے شمار ہوا
ہم بھی ٹوٹیں تو جا بجا ہو جائیں
ہم بھی مجبوریوں کا عذر کریں
پھر کہیں اور مبتلا ہو جائیں
ہم اگر منزلیں نہ بن پائے
منزلوں تک کا راستا ہو جائیں
دیر سے سوچ میں ہیں پروانے
راکھ ہو جائیں یا ہوا ہو جائیں
عشق بھی کھیل ہے نصیبوں کا
خاک ہو جائیں کیمیا ہو جائیں
اب کے گر تو ملے تو ہم تجھ سے
ایسے لپٹیں تری قبا ہو جائیں
بندگی ہم نے چھوڑ دی ہے فرازؔ
کیا کریں لوگ جب خدا ہو جائیں
is se pahle ki be wafa ho jaen
kyun na ai dost hum juda ho jaen

tu bhi hire se ban gaya patthar
hum bhi kal jaane kya se kya ho jaen

tu ki yakta tha be-shumar hua
hum bhi tuten to ja-ba-ja ho jaen

hum bhi majburiyon ka uzr karen
phir kahin aur mubtala ho jaen

hum agar manzilen na ban pae
manzilon tak ka rasta ho jaen

der se soch mein hain parwane
rakh ho jaen ya hawa ho jaen

ishq bhi khel hai nasibon ka
khak ho jaen kimiya ho jaen

ab ke gar tu mile to hum tujh se
aise lipten teri qaba ho jaen

bandagi hum ne chhod di hai ‘faraaz’
kya karen log jab khuda ho jaen

اپنا تبصرہ بھیجیں