Apne Hone Ki Tab O Taab Se Bahar Na Hue

اپنے ہونے کی تب و تاب سے باہر نہ ہوئے
ہم ہیں وہ سیپ جو آزادۂ گوہر نہ ہوئے
حرف بے صوت کی مانند رہے دنیا میں
دشت امکاں میں کھلے نقش مصور نہ ہوئے
پھول کے رنگ سر شاخ خزاں بھی چمکے
قیدی رسم چمن خاک کے جوہر نہ ہوئے
تھک کے گرتے بھی نہیں گھر کو پلٹتے بھی نہیں
نجم افلاک ہوئے آس کے طائر نہ ہوئے
اس کی گلیوں میں رہے گرد سفر کی صورت
سنگ منزل نہ بنے راہ کا پتھر نہ ہوئے
اپنی ناکام امیدوں کے خم و پیچ میں گم
ابر کم آب تھے ہم رزق سمندر نہ ہوئے
apne hone ki tab-o-tab se bahar na hue
hum hain wo sip jo aazada-e-gauhar na hue
 
harf-e-be-saut ki manind rahe duniya mein
dasht-e-imkan mein khule naqsh-e-musawwir na hue
 
phul ke rang sar-e-shaKH-e-KHizan bhi chamke
qaidi-e-rasm-e-chaman khak ke jauhar na hue
 
thak ke girte bhi nahin ghar ko palatte bhi nahin
najm-e-aflak hue aas ke tair na hue
 
us ki galiyon mein rahe gard-e-safar ki surat
sang-e-manzil na bane rah ka patthar na hue
 
apni nakaam umidon ke kham-o-pech mein gum
abr-e-kam-ab the hum rizq-e-samundar na hue

اپنا تبصرہ بھیجیں