Khazana-E-Zar-O-Gohar Pe Khaak Dal Ke Rakh

Khazana-E-Zar-O-Gohar Pe Khaak Dal Ke Rakh

Khazana-E-Zar-O-Gohar Pe Khaak Dal Ke Rakh
Hum ahl-e-mehr-o-mohabbat hain dil nikal ke rakh

Humein to apne samundar ki ret kafi hai
Tu apne chashma-e-be faiz ko sambhaal ke rakh

Zara se dair ka hai ye urooj-e-mal-o-manal
Abhi se zehn mein sab zawiye zawal ke rakh

Yeh bar bar kinare pe kis ko dekhta hai
Bhanwar ke bich koi hosla uchhaal ke rakh

Na jaane kab tujhe jangal mein raat parr jaye
Khud apni aag se shola koi ujaal ke rakh

Jawab aye na aye sawal utha tou sahi
Phir is sawal mein pehlu naye sawal ke rakh

Teri bala se giroh-e-junoon pe kya guzri
Tu apna daftar-e-sud-o-ziyan sambhaal ke rakh

Ch’halak raha hai jo kashkol-e-arzu us mein
Kisi faqeer ke qadmon ki khak daal ke rakh

Khazana-e-zar-o-gohar pe khak dal ke rakh
Hum ahl-e-mehr-o-mohabbat hain dil nikal ke rakh
غزل
خزانہ زر و گوہر پہ خاک ڈال کے رکھ
ہم اہل مہر و محبت ہیں دل نکال کے رکھ

ہمیں تو اپنے سمندر کی ریت کافی ہے
تو اپنے چشمہ بے فیض کو سنبھال کے رکھ

ذرا سی دیر کا ہے یہ عروج مال و منال
ابھی سے ذہن میں سب زاویے زوال کے رکھ

یہ بار بار کنارے پہ کس کو دیکھتا ہے
بھنور کے بیچ کوئی حوصلہ اچھال کے رکھ

نہ جانے کب تجھے جنگل میں رات پڑ جائے
خود اپنی آگ سے شعلہ کوئی اجال کے رکھ

جواب آئے نہ آئے سوال اٹھا تو سہی
پھر اس سوال میں پہلو نئے سوال کے رکھ

تری بلا سے گروہ جنوں پہ کیا گزری
تو اپنا دفتر سود و زیاں سنبھال کے رکھ

چھلک رہا ہے جو کشکول آرزو اس میں
کسی فقیر کے قدموں کی خاک ڈال کے رکھ

خزانہ زر و گوہر پہ خاک ڈال کے رکھ
ہم اہل مہر و محبت ہیں دل نکال کے رکھ

اپنا تبصرہ بھیجیں