Rang Tha Roshni Tha Qamat Tha

Rang Tha Roshni Tha Qamat Tha

Rang Tha Roshni Tha Qamat Tha
Jis pe ham mar mitay qayamat tha

Khush jamalon mein dhoom thi apni
Naam us ka bhi waja-e-shuhraat tha

Paas awargi hamein bhi bahut
Us ko bhi iteraaf wihshaat tha

Ham bhi taakrar kena thay khogar
Wo bhi na ashnaye hajat tha

Khwab-e-tabeer ban ke aatay thay
Kia ajab mosaam-e-rafaqat tha

Apne lehje ka baankpan saara
Us ke pandar ke amanat tha

Es ke kandan badan ka roop saroop
Hassan-e-ehsaas ki badolat tha

Aik ek saans qurbaton ka gawah
Har nafs lamha ghanemaat tha

Aur phir youn howa kek toot gaya
Wo jo ek reshta-e-muhabbat tha

Rang tha roshni tha qamat tha
Jis pe ham mar mitay qayamat tha
غزل
رنگ تھا روشنی تھا قامت تھا
جس پہ ہم مر مٹے قیامت تھا

خوش جمالوں میں دھوم تھی اپنی
نام اس کا بھی وجہ شہرت تھا

پاس آوارگی ہمیں بھی بہت
اس کو بھی اعتراف وحشت تھا

ہم بھی تکرار کے نہ تھے خوگر
وہ بھی نا آشنائے حجت تھا

خواب تعبیر بن کے آتے تھے
کیا عجب موسم رفاقت تھا

اپنے لہجے کا بانکپن سارا
اس کے پندار کی امانت تھا

اس کے کندن بدن کا روپ سروپ
حسن احساس کی بدولت تھا

ایک اک سانس قربتوں کا گواہ
ہر نفس لمحہ غنیمت تھا

اور پھر یوں ہوا کہ ٹوٹ گیا
وہ جو اک رشتۂ محبت تھا

رنگ تھا روشنی تھا قامت تھا
جس پہ ہم مر مٹے قیامت تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں