Sapna agy jata kaise

سپنا آگے جاتا کیسے :
چھوٹا سا اک گاؤں تھا جس میں
دیئے تھے کم اور بہت اندھیرا

بہت شجر تھے تھوڑے گھر تھے
جن کو تھا دوری نے گھیرا

اتنی بڑی تنہائی تھی جس میں
جاگتا رہتا تھا دل میرا

بہت قدیم فراق تھا جس میں
ایک مقرر حد سے آگے
سوچ نہ سکتا تھا دل میرا

ایسی صورت میں پھر دل کو
دھیان آتا کس خواب میں تیرا

راز جو حد سے باہر میں تھا
اپنا آپ دکھاتا کیسے

سپنے کی بھی حد تھی آخر
سپنا آگے جاتا کیسے

: Sapna agy jata kaise
chhota sa ek ganw tha jis mein
diye the kam aur bahut andhera

bahut shajar the thode ghar the
jin ko tha duri ne ghera

itni baDi tanhai thi jis mein
jagta rahta tha dil mera

bahut qadim firaq tha jis mein
ek muqarrar had se aage
soch na sakta tha dil mera

aisi surat mein phir dil ko
dhyan aata kis khwab mein tera

raaz jo had se bahar mein tha
apna-ap dikhata kaise

sapne ki bhi had thi aakhir
sapna aage jata kaise

اپنا تبصرہ بھیجیں