Mein Khulta Hoon Dard-E-Dil Agar Koi Aa Jaye

Mein Khulta Hoon Dard-E-Dil Agar Koi Aa Jaye

Mein Khulta Hoon Dard-E-Dil Agar Koi Aa Jaye
Par iss ka yeh nahi matlab keh har koi aa jaye

Mein andha ban ke guzartay howon ko dekhta tha
Mein chahta tha mujhe dekh kar koi aa jaye

Karon ga aaj talafi, so, mujh samait agar
Kisi ko pahuncha ho mujh se zaroor koi aa jaye

Kis ko dekh ke rastay mein yun ruka jaise
Sarak ke bech, achnak shajar koi aa jaye

Yeh soch kar nahi deta mein tujh ko dil mein jagah
Yahi nah ho keh tere sath dar koi aa jaye

Hoon aainay ke muqabil yun dam bakhud, jaise
Kisi ko dekhna ho aur nazar koi aa jaye

Kisi ko khud nah pukara kabhi aana keh sabab
Bas intezaar kiya umar bhi koi aa jaye

Yun aai wasal ke doraan aik hijr ki yaad
Keh jaisay chutti ke din kaam par koi aa jaye

Mein khulta hoon dard-e-dil agar koi aa jaye
Par iss ka yeh nahi matlab keh har koi aa jaye
غزل
میں کھولتا ہوں درِ دل اگر کوئی آ جائے
پر اِس کا یہ نہیں مطلب کہ ہر کوئی آ جائے

میں اندھا بن کے گزرتے ہوؤں کو دیکھتا تھا
میں چاہتا تھا مجھے دیکھ کر کوئی آ جائے

کروں گا آج تلافی سو مجھ سمیت اگر
کسی کو پہنچا ہو مجھ سے ضرور کوئی آ جائے

کس کو دیکھ کے رستے میں یوں رکا، جیسے
سڑک کے بیچ، اچانک شجر کوئی آ جائے

یہ سوچ کر نہیں دیتا میں تجھ کو دل میں جگہ
یہی نہ ہو کہ ترے ساتھ ڈر کوئی آ جائے

ہوں آئنے کے مقابل یوں دم بخود، جیسے
کسی کو دیکھنا ہو اور نظر کوئی آ جائے

کسی کو خود نہ پکارا کبھی انا کہ سبب
بس انتظار کیا عمر بھی کوئی آ جائے

یوں آئی وصل کے دوران ایک ہجر کی یاد
کہ جیسے چھٹی کے دن کام پر کوئی آ جائے

میں کھولتا ہوں درِ دل اگر کوئی آ جائے
پر اِس کا یہ نہیں مطلب کہ ہر کوئی آ جائے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں