Wo Gul Faroosh Kahan Ab Gulab Kis Se Lon

Wo Gul Faroosh Kahan Ab Gulab Kis Se Lon

Wo Gul Faroosh Kahan Ab Gulab Kis Se Lon
Nahi raha mera saqi sharab kis se lon

Teri talash mein iss umar mastaar ke saal
Jo raigan gaye un ka hisaab kis se lon

Hayat khud hai sawal aur khud jawab apna
Sawal kis se karun mein jawab kis se lon

Kisi ke naam jo mansoob abhi nahi ki thi
Mein apni khooi hoi woh kitab kis se lon

Tumhare baad nah dekhun tumhare jaison ko
To yeh shaben yeh umangen yeh khwab kis se lon

Nasa kisi se bhi le lon shaoor aaj magar
Woh rooz abar-o-shab mehtab kis se lon

Wo gul faroosh kahan ab gulab kis se lon
Nahi raha mera saqi sharab kis se lon
غزل
وہ گل فروش کہاں اب گلاب کس سے لوں
نہیں رہا مرا ساقی شراب کس سے لوں

تری تلاش میں اس عمر مستعار کے سال
جو رائیگاں گئے ان کا حساب کس سے لوں

حیات خود ہے سوال اور خود جواب اپنا
سوال کس سے کروں میں جواب کس سے لوں

کسی کے نام جو منسوب ابھی نہیں کی تھی
میں اپنی کھوئی ہوئی وہ کتاب کس سے لوں

تمہارے بعد نہ دیکھوں تمہارے جیسوں کو
تو یہ شبیں یہ اُمنگیں یہ خواب کس سے لوں

نشہ کسی سے بھی لے لوں شعور آج مگر
وہ روز ابر و شب مہتاب کس سے لوں

وہ گل فروش کہاں اب گلاب کس سے لوں
نہیں رہا مرا ساقی شراب کس سے لوں

اپنا تبصرہ بھیجیں