Dua Lapait Ky Rakh Den Kalam Chor Den Hum

غزل
دعا لپیٹ کے رکھ دیں کلام چھوڑ دیں ہم
تو کیا یہ خوش طلبی کا مقام چھوڑ دیں ہم
 
ہماری خاک کا سونا بنانا مشکل تھا
جو بن رہا ہے تو کیا اس کو خام چھوڑ دیں ہم
 
کہاں کی قیدِعناصر کبھی جو حکم کرو
تمہارے نام پہ سارے غلام چھوڑ دیں ہم
 
نہ عشق ٹھیک سے ہوتا ہے اور نہ کارے جہاں
جو تم کہو تو کوئی ایک کام چھوڑ دیں ہم
Ghazal
Dua Lapait Ky Rakh Den Kalum Chor Den Hum
To kiya khush talbi ka maqam chor den hum
 
Hamari khak ka sona banana mushkil tha
Jo ban raha hai to kiya es ko khaam chor den hum
 
Kahaan ki qadi-e-anaser kabhi jo hukam karo
Tumharay naam py saray ghulam chor den hum
 
Na ishq theek hota hai aur na kaaray jahaan
Jo tum kaho to koi aik kaam chor den hum

اپنا تبصرہ بھیجیں