Khauf Ke Sail-E-Musalsal Se Nikale Mujhe Koi

Khauf Ke Sail-E-Musalsal Se Nikale Mujhe Koi

Khauf Ke Sail-E-Musalsal Se Nikale Mujhe Koi
Mein payambar tu nahin hoon keh bacha le mujhe koi

Apni duniya ke mah-o-mehr samet’te sar-e-sham
Kar gaya jada-e-farda ke hawale mujhe koi

Itni dair aur tawaquf keh yeh aankhen bujh jayen
Kisi be-nur kharabe mein ujale mujhe koi

Kis ko fursat hai keh tamir kare az-sar-e-nau
Khana-e-khawab ke malbe se nikale mujhe koi

Ab kahin ja ke sameti hai umeedon ki bisat
Warna ek umr ki zid thi keh sambhaale mujhe koi

Kya ajab Khema-e-jaan teri tanabin kat jayen
Is se pahle keh hawaon mein uch’hale mujhe koi

kaisi khwahish thi keh socho to hansi aati hai
Jaise mein chahoon usi tarah bana le mujhe koi

Teri marzi meri taqdeer keh tanha reh jaoon
Magar ek aas tou de palne wale mujhe koi

Khauf ke sail-e-musalsal se nikale mujhe koi
Mein payambar tu nahin hoon keh bacha le mujhe koi
غزل
خوف کے سیل مسلسل سے نکالے مجھے کوئی
میں پیمبر تو نہیں ہوں کہ بچا لے مجھے کوئی

اپنی دنیا کے مہ و مہر سمیٹے سر شام
کر گیا جادۂ فردا کے حوالے مجھے کوئی

اتنی دیر اور توقف کہ یہ آنکھیں بجھ جائیں
کسی بے نور خرابے میں اجالے مجھے کوئی

کس کو فرصت ہے کہ تعمیر کرے از سر نو
خانۂ خواب کے ملبے سے نکالے مجھے کوئی

اب کہیں جا کے سمیٹی ہے امیدوں کی بساط
ورنہ اک عمر کی ضد تھی کہ سنبھالے مجھے کوئی

کیا عجب خیمۂ جاں تیری طنابیں کٹ جائیں
اس سے پہلے کہ ہواؤں میں اچھالے مجھے کوئی

کیسی خواہش تھی کہ سوچو تو ہنسی آتی ہے
جیسے میں چاہوں اسی طرح بنا لے مجھے کوئی

تیری مرضی مری تقدیر کہ تنہا رہ جاؤں
مگر اک آس تو دے پالنے والے مجھے کوئی

خوف کے سیل مسلسل سے نکالے مجھے کوئی
میں پیمبر تو نہیں ہوں کہ بچا لے مجھے کوئی

اپنا تبصرہ بھیجیں