Khwab

نظم
خواب
کھلے پانیوں میں گھری لڑکیاں
نرم لہروں کے چھینٹے اڑاتی ہوئی
بات بے بات ہنستی ہوئی
اپنے خوابوں کے شہزادوں کا تذکرہ کر رہی تھیں
جو خاموش تھیں
ان کی آنکھوں میں بھی مسکراہٹ کی تحریر تھی
ان کے ہونٹوں کو بھی ان کہے خواب کا ذائقہ چومتا تھا!
آنے والے نئے موسموں کے سبھی پیرہن نیلمیں ہو چکے تھے!
دور ساحل پہ بیٹھی ہوئی ایک ننھی سی بچی
ہماری ہنسی اور موجوں کے آہنگ سے بے خبر
ریت سے ایک ننھا گھروندا بنانے میں مصروف تھی
اور میں سوچتی تھی
خدایا! یہ ہم لڑکیاں
کچی عمروں سے ہی خواب کیوں دیکھنا چاہتی ہیں
خواب کی حکمرانی میں کتنا تسلسل رہا ہے
Nazam
Khwab
Khule paniyon mein ghiri ladkiyan
Narm lahron ke chhinte udati hui
Baat-be-baat hansti hui
Apne khwabon ke shahzadon ka tazkira kar rahi thin
Jo khamosh thin
Un ki aankhon mein bhi muskurahat ki tahrir thi
Un ke honton ko bhi an-kahe khwab ka zaiqa chumta tha!
Aane wale nae mausamon ke sabhi pairahan nilmin ho chuke the!
Dur sahil pe baithi hui ek nannhi si bachchi
Hamari hansi aur maujon ke aahang se be-khabar
Ret se ek nanha gharaunda banane mein masruf thi
Aur main sochti thi
Khuda-ya! ye hum ladkiyan
Kachchi umron se hi khwab kyun dekhna chahti hain
Khwab ki hukmarani mein kitna tasalsul raha hai!

اپنا تبصرہ بھیجیں