Royein Gaye Sar Pakar Ke Jowari Sohrab Ke

Royein Gaye Sar Pakar Ke Jowari Sohrab Ke

Ghazal
Royein Gaye Sar Pakar Ke Jowari Sohrab Ke
Din akhari hai chehron ki neeli kitab ke
Ab chikhty ho Naslen hamari bigad gai
Ab faiday uthao udharay nisab ke
Kaisa khrab hun keh sabhi parsa-e-sheher
Sadqay utartay hain tumharay khrab ke
Tanhaa tum hi nahi ho jisay chup karwa diya
Maray howay hain hum bhi usi la-jawab ke
Raaten nadamton se bhi khali hain chali gaen
Ondhay parhay howay hain bharay din sharab ke
Royein gaye sar pakar ke jowari sohrab ke
Din akhari hai chehron ki neli kitab ke
غزل
روئیں گے سر پکڑ کے جوواری سہراب کے
دن آخری ہے چہروں کی نیلی کتاب کے
اب چینختے ہو نسلیں ہماری بگڑ گئیں
اب فائدے اٹھاو اُدھارے نصاب کے
کیسا خراب ہوں کہ سبھی پارسہِ شہر
صدقے اتارتے ہیں تمارے خراب کے
تنہا تم ہی نہیں ہو جسے چپ کروا دیا
مارے ہوئے ہیں ہم بھی اُسی لاجواب کے
راتیں ندامتوں سے بھی خالی چلی گئیں
اُندھے پڑے ہوئے ہیں بھرے دن شراب کے
روئیں گے سر پکڑ کے جوواری سراب کے
دن آخری ہے چہروں کی نیلی کتاب کے

اپنا تبصرہ بھیجیں