Thakay Logo Ko Mujbori Mein Dekh Leta Hoon

Thakay Logo Ko Mujbori Mein Dekh Leta Hoon

Thakay Logo Ko Mujbori Mein Dekh Leta Hoon
Mein bas ki khadkion se yeh tamasha dekha leta hoon

Kabhi dil mein udasi hoon tou in mein ja nikalta hoon
Porane doston ko chup se wo baithay dekh leta hoon

Chuphatay hain bahot garmi-e-dil ko magar mein bhi
Gul-e-rukh pe udi rangat ke chintay dekh leta hoon

Khara hoon youn kisi khali qilay ke sehan veeran mein
Keh jaise mein zamino mein dafinay dekh leta hoon

Munir andaza qer fana karna ho jab mujhko
Kisi onchi jagha se jhok ke nichay dekh lata hoon

Thakay logo ko mujbori mein dekh leta hoon
Mein bas ki khadkion se yeh tamasha dekha leta hoon
غزل
تھکے لوگوں کو مجبوری میں چلتے دیکھ لیتا ہوں
میں بس کی کھڑکیوں سے یہ تماشہ دیکھ لیتا ہوں

کبھی دل میں اداسی ہوں تو ان میں جا نکلتا ہوں
پرانے دوستوں کو چپ سے وہ بیٹھے دیکھ لیتا ہوں

چھپاتے ہیں بہت گرمی دل کو مگر میں بھی
گل رخ پر اڑی رنگت کے چھینٹے دیکھ لیتا ہوں

کھڑا ہوں یوں کسی خالی قلعے کے صحن ویراں میں
کہ جیسے میں زمینوں میں دفینے دیکھ لیتا ہوں

منؔیر اندازہ قعرفنا کرنا ہو جب مجھ کو
کسی اونچی جگہ سے جھک کے نیچے دیکھ لیتا ہوں

تھکے لوگوں کو مجبوری میں چلتے دیکھ لیتا ہوں
میں بس کی کھڑکیوں سے یہ تماشہ دیکھ لیتا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں