Kia Khabar Us Roshni Main Or Kia Roshan Hoaa

Ghazal
Kia Khabar Us Roshni Main Or Kia Roshan Hoaa
Jab wo aankhon se pehli martaba roshan hoaa

Wo mere seene se lag kar jis ko roi kon tha wo
Jis ke puujne par main aj uski jagha roshan hoaa

Waise main in raston or taaqchoo ka tha nahi
Phir bhi tum ne jis jagha pe rakh diya roshan hoaa

Tere apne teri kirano ko taraste hain yahaan
To yeh kin galion main kin logoo main ja roshan hoaa

Mere jane pe sabhi roe bahot roe
Ek diya meri tavaqqo ke siwa roshan hoaa

Main ne pocha tha mujh jaisa bhi koi or hai
Door jungle main kahi ek maqbara roshan hoaa

Jane kaisi aag main wo jal raha hai in dino
Us ne moh poncha to mera tauliya roshan hoaa

Koi us ki roshni ke shar se kab mahfooz hai
Meri aankhin bujh gai aur koyla roshan hoaa
غزل
کیا خبر اُس روشنی میں اور کیا روشن ہوا
جب وہ ان آنکھوں سے پہلی مرتبہ روشن ہوا

وہ میرے سینے سے لگ کر جس کو روئی کون تھا
جس کے پوجنے پر میں آج اُس کی جگہ روشن ہوا

ویسے میں ان راستوں اور طاقچوں کا تھا نہیں
پھر بھی تم نے جس جگہ پہ رکھ دیا روشن ہوا

تیرے اپنے تیری کرنوں کو ترستے ہیں یہاں
تو یہ کن گلیوں میں کن لوگوں میں جا روشن ہوا

میرے جانے پہ سبھی روئے بہت روئے مگر
اک دیا میری توقع کے سوا روشن ہوا

میں نے پوچھا تھا مجھ جیسا بھی کوئی اور ہے
دور جنگل میں کہیں اک مقبرہ روشن ہوا

جانے کیسی آگ میں وہ جل رہا ہے ان دنوں
اُس نے منہ پونچھا تو میرا تولیہ روشن ہوا

کوئی اُس کی روشنی کے شر سے کب محفوظ ہے
میری آنکھیں بجھ گئی اور کوئلہ روشن ہوا

اپنا تبصرہ بھیجیں