Anayen Baphren Balaaon Ka Roop Dhaar Liya

Anayen Baphren Balaaon Ka Roop Dhaar Liya

Anayen Baphren Balaaon Ka Roop Dhaar Liya
Mohabbaton ne sazaon ka roop dhaar liya

Sunayi dene lagi meri be basi sab ko
Khamoshiyon ne sadaaon ka roop dhaar liya

Baras rahi hain bohat jum ke dil ke aangan par
Udaasiyon ne ghataon ka roop dhaar liya

Woh chahta tha keh logon ke darmiyan rahe
Khuda ne maa ki duaon ka roop dhaar liya

Bs aik hath hi chhota tha mere hathon se
Gulab rat ne khizaon ka roop dhaar liya

Yeh dasht achay bhalon ko qubool karta nah tha
So hum ne aabla paon ka roop dhaar liya

Azaab jhelay hain itnay keh raas aanay lagay
Sulagti dhoop ne chhaon ka roop dhaar liya

Anayen baphren balaaon ka roop dhaar liya
Mohabbaton ne sazaon ka roop dhaar liya
غزل
انائیں بپھریں، بلاؤں کا روپ دھار لیا
محبتوں نے سزاؤں کا روپ دھار لیا

سنائی دینے لگی میرے بے بسی سب کو
خموشیوں نے صداؤں کا روپ دھار لیا

برس رہی ہیں بہت جم کے، دل کے آنگن پر
اُداسیوں نے گھٹاؤں کا روپ دھار لیا

وہ چاہتا تھا کہ لوگوں کے درمیان رہے
خدا نے ماں کی دعاؤں کا روپ دھار لیا

بس ایک ہاتھ ہی چھوٹا تھا میرے ہاتھوں سے
گلاب رت نے خزاؤں کا روپ دھار لیا

یہ دشت اچھے بھلوں کو قبول کرتا نہ تھا
سو ہم نے آبلہ پاؤں کا روپ دھار لیا

عذاب جھیلے ہیں اِتنے کہ راس آنے لگے
سلگتی دھوپ نے چھاؤں کا روپ دھار لیا

انائیں بپھریں، بلاؤں کا روپ دھار لیا
محبتوں نے سزاؤں کا روپ دھار لیا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں