Qadam Rakhta Hai Jab Raston Pe Yaar Ahista

Ghazal
Qadam Rakhta Hai Jab Raston Pe Yaar Ahista Ahista
To chhat jata hai sab gard-o-ghubar ahista ahista

Bhari aankon se ho kar dil main jana sahil thori hai
Chadhe dariyaon ko karte hain paar ahista ahisat

Nazar ata hai to youn dekhta jata hun main usko
Keh chal padta hai jaise karobar ahista ahista

Wo kehta hai hamare paas aao per saliqay se
Jaise agay padti hai qataar ahista ahista

Kisi din karkhana-e-ghazal main kaam niklega
Palat aen ge sab berozgar ahista ahista

Tera paikar khuda ne bhi tou fursat main banaya tha
Banae ga tere zewar sonar ahista ahista

Meri gosha nashine aik din bazaar dekhe gi
Zarorat kar rahi hai ba-qarar ahista ahista

Idher kuch aurten darwazon pe daudi hoi aain
Udher ghodon se utre shahsawar ahista ahista
 

Qadam Rakhta Hai Jab Raston Pe Yaar Ahista Ahista
To chhat jata hai sab gard-o-ghubar ahista ahista
غزل
قدم رکھتا ہے جب رستوں پہ یار آہستہ آہستہ
تو چھٹ جاتا ہے سب گردوغبار آہستہ آہستہ

بھری آنکھوں سے ہوکر دل میں جانا ساحل تھوڑی ہے
چڑھے دریاؤں کو کرتے ہیں پار آہستہ آہستہ

نطر آتا ہے تو یوں دیکھتا جاتا ہوں میں اُس کو
کہ چل پڑتا ہے جیسے کاروبار آہستہ آہستہ

وہ کہتا ہے ہمارے پاس آؤ پر سلیقے سے
جیسے آگے پڑتی ہے قطار آہستہ آہستہ

کسی دن کارخانہ غزل میں کام نکلے گا
پلٹ آئیں گئے سب بے روزگار آہستہ آہستہ

تیرا پیکر خدا نے بھی تو فرست میں بنایا تھا
بنائے گا تیرے زیور سنار آہستہ آہستہ

میری گوشہ نشینی ایک دن بازار دیکھے گئی
ضرورت کر رہی ہے بے قرار آہستہ آہستہ

ادھر کچھ عورتیں دروازوں پہ دوڑی ہوئی آئیں
اُدھر گھوڑوں سے اترے شاہسوار آہستہ آہست

اپنا تبصرہ بھیجیں