Chali Hai Shehar Main Abke Hawa Tarke Taluq Ki

نظم
چلی ہے شہر میں اب کے ہوا ترک تعلق کی
کہیں ہم سے نہ ہو جائے خطا ترک تعلق کی
بناوٹ گفتگو میں، گفتگو بھی اکھڑی اکھڑی سی
تعلق رسمی رسمی سا،ادا ترک تعلق کی
ہمیں وہ صبر کے اس موڑتک لانے کا خواں ہے
کہ تنگ آ جائیں ہم ،مانگیں دعا ترک تعلق کی
بہانے ڈھونڈتا رہتا ہے وہ مراسم کے
اسےویسے بھی عادت زرا، ترک تعلق کی
یہ بندھن ہم نے باندھا تھا سلامت ہم کو رکھنا تھا
بہت کوشش تو اس نے کی سدا ترک تعلق کی
وہ ملتا بھی محبت سے ہے لیکن عادتاً ساجد
کئے جاتا ہے باتیں جا بجا ترک تعلق کی
Nazam
Chali Hai Shehar Main Abke Hawa Tarke Taluq Ki
Kahen hum sy na ho jaye khata tarke taluq
Banawt goftogo main,goftogo bhi aakhri aakhri se
Taluq rasmi rasmi sa,ada tarke taluq ki
Hamay wo sabar ky is mor tk laany ka khowan hai
Keh tang a jaye ham,mangy dua tarke taluq ki
Bahany dhondta rehta hai wo marasim ky
Usy wasay bhi adat hai zara, tarke taluq ki
Yeh bandhan ham ny bandha tha salamat ham ko rakhna tha
Bhout koshish tu us ny ki sada tarke taluq ki
Wo milta bhi muhabbat sy hai lakin addtan sajid
Kiyaa jata hai baaten ja baja tarke taluq ki

اپنا تبصرہ بھیجیں