Paikar Tha Wafa Ka

ٖغزل
پیکر تھا وفا کا، محبت کا خدا تھا
وہ شخص زما نے میں سب سے ہی جدا تھا
 
چاہت کے خزانے تھے ہر لفظ میں اس کے
دامن میرا اس نے دعاؤں سے بھرا تھا
 
 مجھ کونہیں دیکھ کڑی دھوپ نے چھو کر
بابا میرا دنیا میں مجھے ایسا جو ملا تھا
 
فکریں نا زمانے کی کبھی پاس بھی آئیں
ہر درد میری ہستی سے ڈرتا ہی رہا تھا
 
جب تک رہا سانسوں کا بسیرا میرا بابا
تب تک میں غموں سے بچتا ہی رہا
 
اس شام کی ہدت میرے دل سے نہیں جاتی
جس شام تیرا سائیہ میرے سر سے اٹھا تھا
Ghazal
Paikar Tha Wafa Ka, Mohabbat Ka Khuda Tha
Woh Shakhss Zamaney Mein Sab Se Hi Juda Tha

Chahat Ke Khazane They Har Lafz Mein Us Ke
Daaman Mera Us Ne Duaaon Se Bhar Tha

Mujh Ko Nahin Dekha Karri Dhoop Ne Chu Kar
Baba Mera Duniya Main Mujhe Aesa Jo Mila Tha

Fikrain Na Zamaney Ki Kabhi Paas Bhi Ayin
Hard Dard Meri Hasti Se Dartaa Hi Raha Tha

Jab Taka Raha Saanson Ka Basera Mere Baba
Tab Tak Main Ghamon Se Bachta Hi Raha Tha

Us Shaam Ki Hiddat Mere Dil Se Nahi Jati
Jis Shaam Tera Saaya Mere Sar Se Utha tha

اپنا تبصرہ بھیجیں