Mujh Say Mat Pucho Keh Mujhko Aur Kiya Kiya Yaad Hai

غزل
مجھ سے مت پوچھو کہ مجھکو اور کیا کیا یاد ہے
وہ میرے نزدیک آیا تھا بس اتنا یاد ہے

یوں تو دشت دل میں کتنوں نے قدم رکھے مگر
بھول جانے پہ بھی اک قفے پا یاد ہے

اُس بدن کی گھاٹیاں تک نقش ہیں دل پہ میرے
کُہساروں سے سمندر تک وہ دریا یاد ہے

مجھ سے وہ کافر مسلماں تو نا ہو پایا کبھی
لیکن اُس کو ترجمے کے ساتھ کلمہ یاد ہے
 
Ghazal
Mujh Say Mat Pucho Keh Mujhko Aur Kiya Kiya Yaad Hai
wo meray nazdeek aaya tha bas itna yaad hai

youn to dasht dil main kitno nay qadam rakhay magar
bhool janay pay bhi ek qafay-pa yaad hai

kohsaro say samndro tak wo daryaa yaad hai
us badan ki ghatiya tak naqah hain hain dil pay meray
mujh say wo kafir muslmaa to na ho paya kabhi
liken us ko tarjamay kay sath kalma yaad hai

اپنا تبصرہ بھیجیں