Weraani Aao Thori Madad Chahiye Hai Dost

Weraani Aao Thori Madad Chahiye Hai Dost

Weraani Aao Thori Madad Chahiye Hai Dost
Girye mein mujh ko aik adad chahiye hai dost

Jaisi badan ki shakal mein di ja chuki hamein
Marzi se kis ko aisi lahad chahiye hai dost

Koi tu waja-e-tark-e-talluq ho mere pass
Nafrat hai gar tu uski sanad chahiye hai dost

Medaan-e-jang-o-ishq mein hoti hain kab hudood
Be had bura laga tujhe had chahiye hai dost

Aankhon ke saray khawab talak phaink aaon gi
Ik bar thori jurrat-e-rad chahiye hai dost

Thora sa kam bhi gham ka nahi silsilaa qubool
Jitni talab hai itni rasad chahiye hai dost

Weraani aao thori madad chahiye hai dost
Girye mein mujh ko aik adad chahiye hai dost
غزل
ویرانی آؤ تھوڑی مدد چاہئیے ہے دوست
گریے میں مجھ کو ایک عدد چاہئیے ہے دوست

جیسی بدن کی شکل میں دی جا چکی ہمیں
مرضی سے کس کو ایسی لحد چاہئیے ہے دوست

کوئی تو وجہِ ترکِ تعلق ہو میرے پاس
نفرت ہے گر تو اُسکی سند چاہئیے ہے دوست

میدانِ جنگ و عشق میں ہوتی ہیں کب حدود
بے حد برا لگا تجھے حد چاہئیے ہے دوست

آنکھوں کے سارے خواب تلک پھینک آؤں گی
اک بار تھوڑی جراتِ رد چاہئیے ہے دوست

تھوڑا سا کم بھی غم کا نہیں سلسلہ قبول
جتنی طلب ہے اِتنی رسد چاہئیے ہے دوست

ویرانی آؤ تھوڑی مدد چاہئیے ہے دوست
گریے میں مجھ کو ایک عدد چاہئیے ہے دوست
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں