Theek Hai Khud Ko Hum Badalte Hain

ٹھیک ہے خود کو ہم بدلتے ہیں
شکریہ مشورت کا چلتے ہیں
ہو رہا ہوں میں کس طرح برباد
دیکھنے والے ہاتھ ملتے ہیں
ہے وہ جان اب ہر ایک محفل کی
ہم بھی اب گھر سے کم نکلتے ہیں
کیا تکلف کریں یہ کہنے میں
جو بھی خوش ہے ہم اس سے جلتے ہیں
ہے اسے دور کا سفر در پیش
ہم سنبھالے نہیں سنبھلتے ہیں
تم بنو رنگ تم بنو خوشبو
ہم تو اپنے سخن میں ڈھلتے ہیں
میں اسی طرح تو بہلتا ہوں
اور سب جس طرح بہلتے ہیں
ہے عجب فیصلے کا صحرا بھی
چل نہ پڑیے تو پاؤں جلتے ہیں
Thik Hai Khud Ko Hum Badalte Hain
shukriya mashwarat ka chalte hain

ho raha hun main kis tarah barbaad
dekhne wale hath malte hain

hai wo jaan ab har ek mahfil ki
hum bhi ab ghar se kam nikalte hain

kya takalluf karen ye kahne mein
jo bhi khush hai hum us se jalte hain

hai use dur ka safar dar-pesh
hum sambhaale nahin sambhalte hain

tum bano rang tum bano khushbu
hum to apne sukhan mein dhalte hain 

main usi tarah to bahalta hun
aur sab jis tarah bahalte hain 

hai ajab faisle ka sahra bhi
chal na padiye to panw jalte hain
 

اپنا تبصرہ بھیجیں