Suraj Thay Chiragh-E-Kaf Jada Mein Nazar Aye

Suraj Thay Chiragh-E-Kaf Jada Mein Nazar Aye

Suraj Thay Chiragh-E-Kaf Jada Mein Nazar Aye
Ham aise samandar thay keh darya mein nazar aye

Duniya thi rag-o-pe mein samai hoi aisi
Zid thi keh sabhi kuch esi duniya mein nazar aye

Sarmayah jaan log maata do jahaan log
Dekha tou sabhi ahl-e-tamasha mein nazar aye

Khud daman-e-yousaf ki tamana thi keh ho chaak
Ab ke wo hunaar daast zulekha mein nazar aye

Suraj thay chiragh-e-kaf jada mein nazar aye
Ham aise samandar thay keh darya mein nazar aye
غزل
سورج تھے چراغ ِ کف جادہ میں نظر آئے
ہم ایسے سمندر تھے کہ دریا میں نظر آئے

دنیا تھی رگ و پے میں سمائی ہوئی ایسی
ضد تھی کہ سبھی کچھ اسی دنیا میں نظر آئے

سرمایہ جاں لوگ، متاع دو جہاں لوگ
دیکھا تو سبھی اہل تماشہ میں نظر آئے

خود دامن یوسف کی تمنا تھی کہ ہو چاک
اب کے وہ ہنر دست زلیخا میں نظر آئے

سورج تھے چراغ ِ کف جادہ میں نظر آئے
ہم ایسے سمندر تھے کہ دریا میں نظر آئے

اپنا تبصرہ بھیجیں