Hisaab-E-Umer Ka Itna Sa Goshwara Hai

Hisaab-E-Umer Ka Itna Sa Goshwara Hai

Hisaab-E-Umer Ka Itna Sa Goshwara Hai
Tumhain nikaal ke dekha tou sab khasara hai

Ajab asool hain es karobar duniya ke
Kisi ka qarz kisi aur ne utara hai

Har aik sada ko jo hamein baazgasht lagti hai
Na jane ham hain dubara ya yeh dubara hai

Na jane kab tha kahan tha magar yeh lagta hai
Yeh waqt pehle bhi ham ne kahi guzara hai

Yeh do kinare tou daryaa ke ho gaye ham tum
Magar wo kon hai jo teesra kinra hai

Hisaab-e-umer ka itna sa goshwara hai
Tumhain nikaal ke dekha tou sab khasara hai
غزل
حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارہ ہے
تمہیں نکال کے دیکھا تو سب خسارہ ہے

عجب اصول ہیں اس کاروبارِ دنیا کے
کسی کا قرض کسی اور نے اتارا ہے

ہر ایک صدا کو جو ہمیں بازگشت لگتی ہے
ناجانے ہم ہیں دوبارہ یا یہ دوبارہ ہے

ناجانے کب تھا کہاں تھا مگر یہ لگتا ہے
یہ وقت پہلے بھی ہم نے کہيں گزارا ہے

یہ دو کنارے تو دریا کے ہو گئے ہم تم
مگر وہ کون ہے جو تیسرا کنارہ ہے

حسابِ عمر کا اتنا سا گوشوارہ ہے
تمہیں نکال کے دیکھا تو سب خسارہ ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں