Deewar Dekhta Hai Diya Dekhta Hai Dost

Deewar Dekhta Hai Diya Dekhta Hai Dost

Ghazal
Deewar Dekhta Hai Diya Dekhta Hai Dost
Yeh itny in-hamaak se kia dekhta hai
Apni kahin khabar tou nahi hogi tujhe
Yeh aj kal tu mujhko bara dekhta hai
Galib jo dekhta hai adaa-e-sukhan meri
Akhir koi dost hi ki ada dekhta hai dost
Nazrein kuch aur bhi hain Isi shugal mein sharik
Aisa nahi sirf khuda dekhta hai
Deewar dekhta hai diya dekhta hai dost
Yeh itny in-hamaak se kia dekhta hai
غزل
دیوار دیکھتا ہے دیا دیکھتا ہے دوست
یہ اتنے ان ہماک سے کیا دیکھتا ہے
اپنی کہیں خبر تو نہیں ہو گئی تجھے
یہ آج کل تو مجھکو بڑا دیکھتا ہے
غالب جو دیکھتا ہے ادائے سخن میری
آخِرکوئی دوست ہی کی ادا دیکھتا ہے دوست
نظریں کچھ اور بھی ہیں اسی شغل میں شریک
ایسا نہیں صرف خدا دیکھتا ہے دوست
دیوار دیکھتا ہے دیا دیکھتا ہے دوست
یہ اتنے ان ہماک سے کیا دیکھتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں