Hum Ahl-E-Jabr Ke Nam-O-Nasab Se Waqif Hain

Hum Ahl-E-Jabr Ke Nam-O-Nasab Se Waqif Hain

Hum Ahl-E-Jabr Ke Nam-O-Nasab Se Waqif Hain
Saron ki fasl jab utri thi tab se waqif hain

Kabhi chhupe howay khanjar kabhi khinchi hoi tegh
Sipah-e-zulm ke ek ek dhab se waqif hain

Wo jin ki dast-khaten mahzar-e-sitam pe hain sabt
Har us adib har us be-adab se waqif hain

Yeh raat youn hi to dushman nahi hamari keh hum
Daraazi-e-shab-e-gham ke sabab se waqif hain

Nazar mein rakhte hain asr-e-buland-e-baami-e-mehr
Furaat-e-jabr ke har tishna-lab se waqif hain

Koi nai to nahi harf-e-haq ki tanhai
Jo jaante hain wo is amr-e-rab se waqif hain

Hum ahl-e-jabr ke nam-o-nasab se waqif hain
Saron ki fasl jab utri thi tab se waqif hain
غزل
ہم اہل جبر کے نام و نسب سے واقف ہیں
سروں کی فصل جب اتری تھی تب سے واقف ہیں

کبھی چھپے ہوئے خنجر کبھی کھنچی ہوئی تیغ
سپاہ ظلم کے ایک ایک ڈھب سے واقف ہیں

وہ جن کی دستخطیں محضر ستم پہ ہیں ثبت
ہر اس ادیب ہر اس بے ادب سے واقف ہیں

یہ رات یوں ہی تو دشمن نہیں ہماری کہ ہم
درازی شب غم کے سبب سے واقف ہیں

نظر میں رکھتے ہیں عصر بلند بامیٔ مہر
فرات جبر کے ہر تشنہ لب سے واقف ہیں

کوئی نئی تو نہیں حرف حق کی تنہائی
جو جانتے ہیں وہ اس امر رب سے واقف ہیں

ہم اہل جبر کے نام و نسب سے واقف ہیں
سروں کی فصل جب اتری تھی تب سے واقف ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں